Type to search

خبریں خواتین سیاست فيچرڈ

شہید بینظیر بھٹو سیاست کی بھینٹ چڑھ گئیں

عالمی یوم نسواں کے سرکاری اشتہارات میں اسلامی دنیا کی پہلی خاتون وزیراعظم کا ذکر تک نہیں تھا

حکومت نے کہا ہے کہ وہ عالمی یومِ نسواں کے اشتہارات میں سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کا نام شامل نہ کیے جانے کے معاملے کی تفتیش کرے گی۔

یہ یقین دہانی سینیٹ میں لیڈر آف دی ہاؤس شبلی فراز نے اس وقت کروائی جب پاکستان پیپلز پارٹی کی پارلیمانی لیڈر شیری رحمان نے ہاؤس کی توجہ اس معاملے کی جانب مبذول کروائی۔

شیری رحمان نے اس معاملے پر احتجاج کرتے ہوئے افسوس کا اظہار کیا کہ عالمی یومِ نسواں پر مختلف شعبوں میں اعلیٰ  کارکردگی دکھانے والی خواتین کو نمایاں کرنے کے لیے تخلیق کیے گئے سرکاری اشتہارات میں سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کا نام، تصویر اور حد تو یہ ہے کہ ذکر تک موجود نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ بے نظیر بھٹو پاکستان کی شناخت ہیں اور ان کی کامیابیوں کو عالمی سطح پر سراہا گیا۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کے مختلف حصوں میں سڑکوں کے نام ان سے منسوب کیے گئے ہیں جب کہ عالمی جامعات ان کے نام سے چیئرز قائم کر رہی ہیں۔

شیریں رحمان نے اس معاملے پر حکومت سے سرکاری طور پر معافی طلب کی۔ قبل ازیں، حزبِ اختلاف نے بے نظیر بھٹو کا نام اشتہارات میں شامل نہ کیے جانے پر سینیٹ کے اجلاس کا بائیکاٹ بھی کیا۔

شبلی فراز نے حزبِ اختلاف کے ارکان کی عدم موجودگی میں اعتراف کیا کہ بے نظیر بھٹو نے خواتین کو مثالی قیادت فراہم کی۔ انہوں نے کہا کہ اسلامی دنیا کی اولین خاتون وزیراعظم کی جمہوریت کی بحالی کے لیے جدوجہد شک و شبہ سے بالاتر ہے۔ شبلی فراز نے اعتراف کیا کہ پاکستان کی سیاست میں بے نظیر بھٹو کا مقام نمایاں ہے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی یوم نسواں کے اشتہارات میں بے نظیر بھٹو کا نام شامل نہ ہونا ایک خاص طرح کی سوچ کی عکاسی کرتا ہے۔ شبلی فراز نے اس معاملے کی تفتیش کروانے کا وعدہ بھی کیا۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *