Type to search

انسانی حقوق خبریں سیاست فيچرڈ

مقبوضہ کشمیر کے اخبارات کا انوکھا احتجاج

مقبوضہ کشمیر کے اخبارات نے انڈین حکومت کی میڈیا سنسرشپ کی پالیسی کے خلاف انوکھا احتجاج کرتے ہوئے پہلے صفحے پر کوئی خبر شائع نہیں کی اور صرف ایک احتجاجی تحریر درج کی ہے کہ بھارتی حکام نے انہیں اشتہارات دینے سے انکار کر دیا ہے۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کی انتظامیہ نے 14 فروری کو ضلع پلوامہ میں ہونے والے خودکش حملے میں انڈین پیرا ملٹری فورسز کے 44 اہل کاروں کی ہلاکت کے بعد دو مقامی اخبارات کو اشتہار دینے سے انکار کر دیا تھا۔

قبل ازیں، کشمیر ایڈیٹرز گلڈ نے پریس کونسل آف انڈیا اور ایڈیٹرز گلڈ سے اس معاملے میں مداخلت کرنے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ وہ اپنے قانونی، اخلاقی اور پیشہ ورانہ حق کا استعمال کریں اور یہ تاثر دیں کہ میڈیا انتشار کا شکار نہیں ہے۔

کشمیر ایڈیٹرز گلڈ نے ان پابندیوں کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ کشمیر کا میڈیا نہایت پروفیشنل ہے اور جانوں کی قیمت پر بھی اپنی غیر جانبداری کو برقرار رکھتا ہے۔

بعدازاں، مقبوضہ کشمیر کی سابق وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کیا کہ اخبارات کے اشتہارات پر لگائی گئی اس پابندی کو مرکز ی حکومت کی جانب سے پریس اور الیکٹرانک میڈیا کے ساتھ  روا رکھے جا رہے جابرانہ رویے کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

انہوں نے اخبارات کی تصاویر شیئر کرتے ہوئے مزید کہا کہ یہ ایجنڈا جارحانہ ہے اور لوگوں کی ایک بڑی  تعداد اس سے متاثر ہو رہی ہے۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *