Type to search

انسانی حقوق خبریں دہشت گردی فيچرڈ

کشمیری طالبعلموں کی مدد کرنے پر بھارتی صحافی کو قتل کی دھمکیاں

پاک بھارت کشیدگی کے دوران کشمیری طالب علموں کو تشدد سے بچا کر پناہ دینے اور باحفاظت گھر پہنچانے پر بھارتی صحافی کو انتہا پسندوں کی جانب سے قتل کی دھمکیاں مل رہی ہیں۔

26 برس کی ساگریکا کسو کشمیری پنڈٹ ہیں، وہ جموں کی رہائشی ہیں اور ان دنوں ایک آن لائن نیوز چینل سے منسلک ہیں۔

یاد رہے کہ پلوامہ حملے کے بعد جب بھارت میں کشمیری طالب علم انتہاپسندی کا شکار ہو رہے تھے تو ساگریکا نے ٹویٹر پر کھل کر کشمیری طالب علموں کو پناہ دینے کی پیشکش کی۔ انہوں نے ایک ماہ کے دوران نہ صرف 18 کشمیری طالب علموں کو پناہ دی بلکہ انہیں باحفاظت کشمیر میں ان کے آبائی علاقوں میں بھی پہنچایا جس پر متعدد کشمیری نوجوانوں نے ٹویٹر پر ان کا شکریہ ادا کیا۔

مسلمان کشمیری نوجوانوں کو پناہ فراہم کرنا اور مودی حکومت پر تنقید کے باعث ساگریکا پر اب بھارتی انتہاپسندوں کی جانب سے غدار کے فتوے لگائے جا رہے ہیں اور سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر قتل کی دھمکیاں دی جا رہی ہیں جس کے باعث بھارتی صحافی کی جان کو خطرات لاحق ہو چکے ہیں۔

 

Tags:

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *