Type to search

سیاست فيچرڈ

پشتون تحفظ موومنٹ کو ریاست کی مسیحائی درکار ہے، جراحی نہیں

پاکستان نے وجود میں آنے کے بعد جن دو چیزوں میں بے پناہ ترقی کی ہے وہ غداری اور کفر کی اسناد بنانا اور انہیں تقسیم کرنا ہے۔ 50 کی دہائی سے غدار اور کافر کافر کا یہ کھیل رچایا گیا اور آج اکیسویں صدی کی دوسرے دہائی کے اختتام کے قریب بھی یہ کھیل اسی طرح جاری و ساری ہے۔ پہلے باچا خان، حسین شہید سہروردی، فاطمہ جناح اور شیخ مجیب غدار قرار پائے اور اس کے بعد ذوالفقار بھٹو، اکبر بگٹی، بینظیر بھٹو اور نواز شریف وغیرہ کی باری آئی۔ اس دوران ملک میں آئین کو جوتوں تلے روندنے والے آمر پھر بھی محب وطن ہی ٹھہرے۔ ہم نے جس بھاری مقدار میں غدار اور کافر اس ملک میں تیار کیے ہیں اس کو دیکھنے کے بعد محسوس یوں ہوتا ہے کہ شاید محب وطن اور سچے مسلمان محض وہی ہیں جو ڈھور ڈنگروں کی مانند ان قوتوں کے اشاروں پر ہانکے جانے کو زندگی کا حاصل گردانتے ہیں جو وطن عزیز میں غداری اور کفر کی اسناد بانٹتی اور تقسیم کرتی ہیں۔

پشتون تحفظ موومنٹ پر غداری کے الزامات

حال ہی میں ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پی آر کی تازہ پریس کانفرنس جس میں کہ پشتون تحفظ موومنٹ کو غدار قرار دیتے ہوئے ان پر را اور این ڈی ایس سے پیسے لینے کے الزامات لگائے گئے اس کو دیکھ کر کسی کو بھی حیرت نہیں ہوئی۔ بلکہ تعجب اس بات پر ہوا کہ مہربانوں نے پشتون تحفظ موومنٹ کو غدار قرار دینے میں اتنی دیر کیسے کر دی۔ پشتون تحفظ موومنٹ کا لہجہ تلخ ہے اور اس بات سے انکار ممکن نہیں ہے کہ پشتون نوجوانوں پر مشتمل اس تحریک نے براہ راست ریاستی اداروں کے خلاف آواز بلند کی۔ لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ان نوجوانوں کے لہجے میں تلخی پیدا کرنے والے عوامل کیا ہیں اور ریاست نے ان نوجوانوں کے درد کے مرہم کا کیا سامان پیدا کیا ہے؟

مسئلہ یہ ہے کہ پشتون تحفظ موومنٹ ’کنٹرولڈ‘ نہیں ہے

پاکستان کی سیاسی تاریخ پر نگاہ ڈالی جائے تو ادراک ہوتا ہے کہ یہاں چلنے والی بیشتر اسٹیبلشمنٹ مخالف تحریکیں بھی “کنٹرولڈ” رہی ہیں۔ پشتون تحفظ موومنٹ چونکہ “کنٹرولڈ” نہیں ہے اس لئے اس تحریک میں سب سے زیادہ غم و غصہ مقتدر قوتوں کے خلاف پایا جاتا ہے۔ اس تحریک میں شامل بیشتر نوجوان بچوں نے نائن الیون کے حالات کے پس منظر میں ہوش سنبھالا اور افغانستان جنگ اور کبھی اپنے وطن میں عسکری آپریشنوں کے نتیجے میں اپنے علاقوں میں تباہی دیکھی۔ اس لئے ان کے لہجے کی کڑواہٹ ایک فطری عمل ہے لیکن ریاست کے لہجے میں غصہ اور دھمکی کا عنصر ایک قابل تشویش امر ہے۔

میڈیا بلیک آؤٹ اور vilification کے باوجود منظور پشتین کی تحریک کامیاب ہے

منظور پشتین جو کہ پی ٹی ایم کا چہرہ ہے آپ اسے ولن بھی سمجھ سکتے ہیں اور ہیرو بھی کیونکہ ہمارے یہاں ہر کوئی اپنی اپنی پسند کے نظریوں پر یقین کرنا پسند کرتا ہے لیکن اس حقیقت سے انکار قطعاً ممکن نہیں ہے کہ منظور پشتین اور اس کی تحریک کے مکمل میڈیا بلیک آؤٹ اور ’vilification‘ کے باوجود اور مین سٹریم میڈیا پر ان کے خلاف یکطرفہ بیانیہ چلانے کے باوجود منظور پشتین نہ صرف اس تحریک کو بام عروج تک لانے میں کامیاب ہو گیا بلکہ اس نے پی ٹی ایم کے پلیٹ فارم سے بیشتر ایسے سوالات بھی کھڑے کر دیے جو اکثر افراد کسی مصلحت یا خوف کے باعث لبوں پر نہیں لا پاتے۔

پی ٹی ایم کے نعرے بھلے تکلیف دہ ہوں، ان کا کوئی مطالبہ غیر آئینی نہیں

پشتون تحفظ موومنٹ کی جانب سے 400 سے زائد افراد کا ماورائے عدالت قتل کرنے والے پولیس افسر راؤ انوار کی گرفتاری کا مطالبہ اور لاپتہ افراد کی بازیابی اور انہیں عدالتوں میں شفاف مقدمات کی سہولت دینا کون سے آئین کی خلاف ورزی ہے اس بارے میں روشنی شاید وہی قوتیں ڈال سکتی ہیں جن کے پاس غداری اور کفر کی ڈھالیں موجود ہیں۔ اسی طرح قبائلی علاقوں سے بارودی سرنگوں کا خاتمہ گڈ طالبان بیڈ طالبان کی پالیسی ختم کرنے کے مطالبات اور اداروں کو آئین کی حدود میں رہتے ہوئے کام کرنے کا پابند رہنے کے مطالبات بھی کسی اعتبار سے آئین پاکستان کی خلاف ورزی کے زمرے میں نہیں آتے۔ ہاں جو نعرے پی ٹی ایم کے پلیٹ فارم سے لگائے جاتے ہیں ان پر اعتراض ضرور کیا جا سکتا ہے لیکن کیا یہ ریاست کا فرض نہیں ہے کہ ان نعروں کے پیچھے چھپے غم و غصے کو کم کرنے کیلئے پشتون تحفظ موومنٹ سے سیاسی مذاکرات کا آغاز کرے اور ان مذاکرات کی باگ ڈور پارلیمان کے پاس ہو؟

دنیا کے کسی مہذب معاشرے میں کسی سیاسی یا انسانی حقوق کی مقبول تحریک پر میڈیا کے ذریعے غداری کے الزامات نہیں لگائے جاتے

پی ٹی ایم پشتون بیلٹ کے نوجوانوں کی ایک مقبول جماعت ہے اور اس پر غداری اور غیر ملکی انٹیلیجنس ایجنسیوں سے پیسے لینے کے سنگین الزامات عائد کرنے سے صرف اور صرف پشتون علاقوں کے نوجوانوں کے احساس محرومی میں اضافہ ہوگا اور وہ سیاسی اور سماجی تحریک جو ابھی تک کسی نہ کسی صورت میں مرکزی قومی دھارے میں شامل ہے اس سے باہر دھکیل دی جائے گی۔ یہی وجہ ہے کہ دنیا کے کسی مہذب معاشرے میں کسی سیاسی یا انسانی حقوق کی مقبول تحریک پر میڈیا کے ذریعے الزامات نہیں لگائے جاتے بلکہ ایسی تحریک کو مذاکرات کی میز پر لانے کی حتی المقدور کوششیں کی جاتی ہیں۔ یہ سیاسی اور سماجی سائنس کا مانا ہوا اصول ہے کہ مقبول تحاریک کبھی بھی زور زبردستی طاقت کے دم پر کچلی نہیں جاتیں۔ دوسری جانب اگر پشتون تحفظ موومنٹ کی اعلیٰ قیادت کے خلاف عدالتوں میں مقدمات کا اندراج کیا گیا تو پہلے سے کمزور ساکھ کی عدلیہ جو ہر دور میں آمریت پر مہر ثبت کرتی آئی ہے اس کی ساکھ مزید کمزور ہوگی اور پی ٹی ایم کے بیانیے کو مزید تقویت ملے گی کہ ریاست ان کے آئینی مطالبات پر کان دھرنے کو تیار نہیں ہے بلکہ ان کو زور زبردستی کچلنا چاہتی ہے۔

مرکزی دھارے کے میڈیا میں موجود چند بوڑھے گدھ اور ان کے چیلے چاٹے

اس صورتحال میں مین سٹریم میڈیا حسب معمول جلتی پر آگ چھڑکنے کا کام انجام دے رہا ہے۔ اپنے صحافتی فرض کی ادائیگی اور پشتون تحفظ موومنٹ کے مؤقف کو تو یہ بوجہ ان دیکھی سینسر شپ وقت نہیں دے رہا لیکن عملی صحافت کے تقاضوں سے ناآشنا کئی ٹی وی اینکرز اور مفادات کے حصول کیلئے صحافت کا پیشہ اختیار کرنے والے کئی بزرگ صحافی بھی اس معاملے میں فریق بنے بیٹھے ہیں اور شاہ سے بڑھ کر شاہ کا وفادار بن کر پشتون تحفظ موومنٹ کو غدار اور وطن دشمن بنانے کی تگ و دو میں مصروف ہیں۔ یہ اسی صحافی طبقے کی جدید نظریاتی نسل ہے جو سقوط ڈھاکہ سے قبل بنگالیوں کو کمزور اور وطن دشمن بنانے پر مصر تھا اور سقوط ڈھاکہ کے بعد اکبر بگٹی، بالاچ مری کے خلاف بھی زہر افشانی کر کے بلوچستان میں بھی آگ لگانے میں پیش رہا۔ افسوس یہ ہے کہ اس مخصوص گروہ نے محض خوشنودی اور آسائشات کیلئے صحافت کی قدروں کو نقصان پہنچایا اور وطن عزیز میں منافرت پھیلانے میں اہم کردار ادا کیا۔ اور آج بھی یہ طبقہ ریاست کو پشتون نوجوانوں کے خلاف صف آرا دیکھنا چاہتا ہے۔

کیا قوت کے دم پر ریاست بنگالیوں کو اپنے ساتھ رکھنے میں کامیاب ہوئی؟

بات صرف اتنی سی ہے کہ اگر مقتدر قوتوں نے سقوط ڈھاکہ اور بلوچستان میں لگی آگ سے کچھ سبق حاصل نہیں کیا اور شدت پسندی کے زہر سے سماجی و سیاسی ڈھانچوں کی بربادی بھی ان کی سوچ میں تبدیلی نہیں لا سکی تو پھر شاید ہم آج بھی ساٹھ اور ستر کی دہائی میں مقید ہیں۔ ریاست کے پاس لامحدود وسائل اور قوت ہوا کرتی ہے اور یہ وقتی طور پر بڑی سے بڑی تحریک کو کچلنے کی اہلیت رکھتی ہے لیکن سوال یہ ہے کیا قوت کے دم پر ریاست بنگالیوں کو اپنے ساتھ رکھنے میں کامیاب ہوئی؟ کیا طاقت کے استعمال سے بلوچستان میں امن قائم ہوا؟ یہ نئی نسل کے پشتون نوجوان ریاست سے جراحی نہیں بلکہ مسیحائی مانگتے ہیں۔ کیا قباحت ہے کہ اگر ریاست بڑا پن دکھاتے ہوئے از خود راؤ انوار کے خلاف فریق بنے اور اسے اس کے جرائم کی قرار واقعی سزا دے دے اور لاپتہ افراد کو بازیاب کروا کر عدالتوں میں پیش کر دے؟

اس تحریک کو بزور طاقت کچلنا ناممکن سی بات ہے

منظور پشتین یا پشتون تحفظ موومنٹ طاقت یا اقتدار کی سیاست نہیں کر رہے اس لئے انہیں سیاسی بساط پر سود و زیاں کی کوئی فکر نہیں اور نہ ہی اس بساط پر ان کے پاس ہارنے کو کچھ موجود ہے۔ اس لئے اس تحریک کو بذور طاقت کچلنا ناممکن سی بات ہے۔ البتہ گفت و شنید سے بہت سے مسائل کا حل نکالا جا سکتا ہے۔ اگر غداری اور کفر کے فتوے دینے کے جائے تمام ریاستی ادارے اپنی اپنی آئینی حدود میں رہ کر اپنے فرائض انجام دیں اور دستور کو سب سے مقدم جانیں تو پشتون تحفظ موومنٹ جیسی تحریکیں جنم ہی نہیں لیں گی اور نہ ہی ریاستی اداروں کو اپنے خلاف تکلیف دہ نعرے سننے پڑیں گے۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *