Type to search

انصاف سیاست قومی

نیب قانون کا غلط استعمال نہیں ہونا چاہیے، چیف جسٹس

نیب قانون کا یہ مطلب نہیں کہ آپ اسے جیسے مرضی استعمال کریں، پہلے ہم سنتے تھے کی سیاسی وفاداریاں تبدیل کرنے کے لیے نیب قانون کا استعمال کیا جاتا تھا، اب سول سوسائٹی کو کرمنل لا کے ذریعے ڈیل کیا جا رہا ہے، نیب قانون کا غلط استعمال نہیں ہونا چاہیے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں چیف جسٹس آصف کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے ملزم حشمت اللہ شاہ کیس کی سماعت کی، حشمت اللہ پر لوگوں سے کاروبار میں شراکت داری کے لیے دو کروڑ 70 لاکھ روپے لے کر خرد برد کا الزام تھا۔

وکیل ملزم نے کہا کہ حشمت اللہ 1986 سے کاربار کر رہا تھا، 2003 سے 2007 کے دوران 24 افراد نے بزنس میں شراکت کے لیے انویسٹمنٹ کی۔

وکیل نیب نے عدالت کو بتایا ملزم نے لوگوں کو دعوت دی کہ اس بزنس میں پیسے لگائیں، جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ امانت کے طور پر پیسے دینے اور بزنس میں لگانے میں فرق ہوتا ہے، تمام بزنس ضروری نہیں کامیاب ہوں، اکثر بزنس ناکام ہو جاتے ہیں۔

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ اپنے ریماکس میں کہا کہ نیب قانون کا یہ مطلب نہیں کہ آپ اسے جیسے مرضی استعمال کریں، نیب قانون کا غلط استعمال نہیں ہونا چاہیے۔

یاد رہے کہ ٹرائل کورٹ نے ملزم حشمت اللہ کو چار سال قید اور جرمانے کی سزا سنائی تھی، بلوچستان ہائی کورٹ نے ٹرائل کورٹ کا فیصلہ برقرار رکھا تھا۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *