Type to search

انسانی حقوق بین الاقوامی خبریں

قطر کا غیر ملکی مزدوروں کے قوانین میں اہم تبدیلیوں کا اعلان، اہم شرط ختم

  • 10
    Shares

قطر نے غیر ملکی مزدوروں کے قوانین میں اہم تبدیلیوں کا اعلان کر دیا۔ قطر کی وزارت محنت نے اعلان کیا ہے کہ ان کا ملک غیر ملکی کارکنوں کیلئے سپانسرشپ سسٹم یعنی کفیل کے نظام کو مکمل طور پر ختم کر دے گا۔ اس کے علاوہ تارکین وطن کے لیے ملک چھوڑنے کے لیے کفیل یا کمپنی کی اجازت کی ضرورت کو بھی ختم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔

قطری نشریاتی ادارے کی رپورٹ کے مطابق قطر کے وزیر محنت یوسف محمد العثمان فخرو نے اعلان کیا ہے کہ ان کا ملک غیر ملکی کارکنوں کیلیے سپانسرشپ سسٹم یعنی کفیل کے نظام کو مکمل طور پر ختم کر دے گا اور 2022 سے کم سے کم اجرت کا نظام بھی شروع کرے گا۔

خیال رہے کہ سپناسر شپ کے قانون کے تحت غیر ملکی کارکنوں کو کفیل کی پیشگی اجازت کے بغیر ملک چھوڑنے یا کام تبدیل کرنے کی اجازت نہیں ہے اور کارکنوں کے حقوق کا تحفظ کرنے والی بین الاقوامی تنظیمیں کفیل کے نظام پر تنقید کرتی رہی ہیں۔

قطری وزیراعظم عبداللہ بن ناصر بن خلیفہ الثانی نے ٹویٹ کرتے ہوئے خبر کی تصدیق کی اور کہا کہ ‘پالیسیوں اور قانون میں اصلاح مزدوروں کے فلاحی معیار کو بہتر بنانے کے لیے کی گئی ہے، قطر مزدوروں کے بنیادی حقوق فراہم کرنے کے لیے پر عزم ہے’۔

بین الاقوامی لیبر آرگنائزیشن کے ڈائریکٹر نے سپناسر شپ کے نظام کو جدید غلامی کے طور پر بیان کرتے ہوئے قطر کے حالیہ اعلان کا خیرمقدم کیا ہے۔

انٹرنیشنل لیبر آرگنائزیشن نے توقع ظاہر کی ہے کہ نئے قوانین جنوری 2020 سے نافذالعمل ہو جائیں گے۔

واضح رہے کہ 2022 کے فیفا ورلڈ کپ کی میزبانی قطر کو ملنے کے اعلان کے بعد سے اس ملک کے مزدوروں کے حوالے سے قوانین زیر بحث رہے ہیں، حکومت ٹورنامنٹ سے قبل اس تنازع کا حل چاہتی ہے۔

Tags:

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *