Type to search

احتجاج خبریں سیاست قومی

بشیر میمن کے استعفے کے پیچھے چھپی 6 مہینے کی کہانی

ڈی جی ایف آئی اے بشیر میمن نے ریٹائرمنٹ سے پہلے استعفیٰ حکومتی دباؤ کے باعث دیا۔ ان پر دباؤ تھا کہ وہ اپوزیشن رہنماؤں کے خلاف کارروائی کریں۔

نجی ٹی وی چینل جیو نیو کے پروگرام میں صحافی زاہد گشکوری نے بشیر میمن کے استعفے کے پیچھے چھپی کہانی بیان کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ انہوں نے یہ استعفیٰ اہم کیسز میں اعلیٰ حکام کی مداخلت کی وجہ سے دیا۔

اینکر پرسن شاہ زیب خانزادہ کے سوال کا جواب دیتے ہوئے زاہد گشکوری نے بتایا کہ سابق ڈی جی ایف آئی اے بشیر میمن نے اپنی 35 سالہ سروس سے استعفیٰ دیا ہے، اس کے پیچھے 6 مہینے کی ایک کہانی چھپی ہے۔

صحافی نے بتایا کہ جب جج ارشد ملک ویڈیو سکینڈل کیس ایف آئی اے کے پاس آیا تو ایف آئی اے، ڈی جی بشیر میمن کی سربراہی میں تحقیقات کر رہی تھی۔ اس دوران اعلیٰ حکام ان سے پیغامات کے ذریعے رابطہ کر رہے تھے۔

کیس کے دوران اعلیٰ حکام ایف آئی اے سے دن بدن تفصیلات لیتے تھے اور جب کیس میں نامزد ملزم ناصر جنجوعہ کی ضمانت ہوئی تو اس پر حکومتی اعلیٰ عہدیدران کی جانب سے غصے کا اظہار کیا گیا تھا اور بشیر میمن کو کیس نئے سرے سے تیار کرنے اور دہشتگردی کی دفعات لگانے کا کہا گیا تھا۔ بشیر میمن کو تحقیاتی ٹیم بدلنے کا بھی کہا گیا تھا۔

ڈی جی ایف آئی اے بشیر میمن نے احتجاجاً ملازمت سے استعفیٰ دے دیا

زاہد گشکوری کے مطابق اس کے علاوہ اور کئی مقدمات میں بھی اُن پر اعلیٰ حکام کا براہ راست پریشر تھا اور یہ وہ ساری چیزیں تھیں جو 6 مہینے سے چل رہی تھیں۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز وفاقی تحقیقاتی ایجنسی کے سابق ڈائریکٹر جنرل بشیر میمن نے سروس سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

انہوں نے اپنے استعفے میں لکھا تھا کہ ریٹائرمنٹ کے قریب پوسٹنگ نہ دینے کا مطلب ناراضگی کا اظہار ہے اور اخلاقیات کا تقاضا ہے کہ نوکری سے مستعفی ہو جاؤں۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *