Type to search

خبریں سیاست قومی

بچوں سے زیادتی کے بعد قتل کرنے والے مجرموں کو سرعام پھانسی دینے کی قرارداد منظور

Parliament of Pakistan

قومی اسمبلی میں بچوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنا کر قتل کرنے والے افراد کو سرعام پھانسی دینے کی قرارداد کثرت رائے سے منظور کر لی گئی۔

ڈپٹی سپیکر قاسم سوری کی زیرِصدارت قومی اسمبلی کے اجلاس میں وزیر پارلیمانی امور علی محمد خان نے مذکورہ قرارداد پیش کی۔ قرارداد میں بچوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کرنے والوں کو سرعام پھانسی دینے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

اجلاس میں اپوزیشن جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کی جانب سے سرعام پھانسی دینے کی مخالفت کی گئی۔ اس موقع پر راجہ پرویز اشرف نے قومی اسمبلی میں اظہارِ خیال کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان اقوام متحدہ کا رکن ہے اور اقوام متحدہ کے قوانین کے مطابق سرعام پھانسی نہیں دی جا سکتی۔

انہوں نے کہا کہ ایک اور کیس میں بھی سرِعام پھانسی کا فیصلہ آیا تھا اس کا کیا ہوا، سزائیں بڑھانے سے جرائم کم نہیں ہوتے۔ تاہم پیپلزپارٹی کی مخالفت کے باوجود قومی اسمبلی میں مذکورہ قرارداد کو کثرتِ رائے سے منظور کر لیا گیا۔

دوسری جانب وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے اپنی جماعت کی جانب سے پیش کی گئی قرارداد کی سخت مذمت کی۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کیے گئے ٹوئٹ میں فواد چوہدری نے لکھا کہ یہ ظالمانہ تہذیب کے طریقوں میں سے ایک اور سنگین فعل ہے، معاشرے متوازن طریقے سے چلتے ہیں۔ جرائم کا جواب بربریت نہیں ہوتا یہ انتہاپسندی کا ایک اور اظہار ہے۔

وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے واضح کیا کہ قرارداد حکومت کی جانب سے نہیں پیش کی گئی بلکہ یہ ایک انفرادی عمل تھا۔

ٹوئٹر پر کیے گئے ٹوئٹ میں انہوں نے کہا کہ ہم میں سے اکثر اس کی مخالفت کرتے ہیں، وزارت انسانی حقوق اس کی سخت مخالفت کرتی ہے۔ میں ایک میٹنگ میں مصروف تھی اور اس وجہ سے قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت نہیں کر سکی۔

اس سے قبل رواں برس 10 جنوری کو ریپ اور قتل کا نشانہ بننے والی زینب انصاری کی لاش کے ملنے کے ٹھیک 2 سال بعد قومی اسمبلی میں زینب الرٹ ریکوری اینڈ رسپانس ایکٹ 2019 متفقہ طور پر منظور کیا گیا تھا۔ اگست 2019 میں پارلیمانی کمیٹی نے زینب الرٹ بل کی راہ میں رکاوٹ ڈالتے ہوئے حکومت کو ہدایت کی تھی کہ بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے مجرموں کو ‘سخت ترین’ سزا دی جانی چاہیے۔ چند کے علاوہ کمیٹی کے تمام اراکین نے اس جرم کے لیے عمر قید کی سزا کی مخالفت کی تھی جبکہ دیگر کا کہنا تھا کہ اس جرم پر سزائے موت ہی ہونی چاہیے۔

بل کے مطابق بچوں کے خلاف جرائم پر عمر قید، کم سے کم 10 سال اور زیادہ سے زیادہ 14 سال سزا دی جاسکے گی جبکہ 10 لاکھ کا جرمانہ بھی عائد کیا جائے گا، تاہم بل کے مطابق یہ قانون صرف وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں لاگو ہوگا۔

Tags:

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *