Type to search

خبریں عورت مارچ

لاہور میں عورت مارچ کے لئے لگائے گئے پوسٹر پھاڑ دیے گئے

لاہور میں نامعلوم افراد نے حسین چوک کے قریب عورت مارچ کے لئے لگائے گئے پوسٹرز پھاڑ دیے۔

عورت مارچ انتظامیہ کو موصول ہونے والی تصاویر میں یہ پھٹے ہوئے پوسٹر دیکھے جا سکتے ہیں۔

عورت مارچ کے اکاؤنٹ سے جاری کی گئی تصاویر میں پھٹے ہوئے پوسٹرز دیکھے جا سکتے ہیں۔ ٹوئیٹ میں لکھا گیا کہ آج صبح ہم نے بہن چارے کی خوبصورت مثال دیکھی جب سب خواتین نے مل کر یہ پوسٹرز بنائے اور اب انہیں پھاڑ دیا گیا ہے۔

 

ٹوئٹر پر اس اطلاع پر ایک خواتون نے لکھا کہ غنڈہ گردی کی یہ حرکت دیکھ کر انتہائی افسوس ہوا۔

ایک اور خاتون نے اس کے پیچھے ’ملّا مافیا‘ کے ہاتھ کی طرف اشارہ کیا۔

عورت مارچ 8 مارچ 2020 کو منعقد ہونے جا رہا ہے۔ گذشتہ برس بھی عورت مارچ کے بعد اس کے پیغام پر شدید تنقید کی گئی تھی۔ پچھلے چند سالوں کے دوران عورت مارچ نے تیزی سے خواتین کو اپنی جانب راغب کیا ہے۔ ماضی میں اس پر یہ تنقید کی جاتی تھی کہ اس میں صرف متمول طبقے کے افراد ہی شرکت کرتے ہیں لیکن جیسے جیسے یہ تحریک مقبولیت حاصل کر رہی ہے، اس میں متوسط طبقے اور نچلے طبقے کی خواتین کی شرکت بھی بڑی تعداد میں ہونا شروع ہو گئی ہے۔

تاہم، اس کی مقبولیت سے خائف افراد کے لئے یہ اتنا ہی بڑا مسئلہ بھی بن کر سامنے آ رہا ہے۔ گذشتہ برس بھی انتظامیہ میں شامل خواتین کو دھمکی آمیز فون کالز اور ای میلز موصول ہوئی تھیں۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *