Type to search

تجزیہ سیاست

کیس درست بھی ہوتا، نیب ثابت نہ کر پاتی: ضیاالدین؛ ان ہاؤس تبدیلی مشکل ہے: مرتضیٰ سولنگی

سابق وزیر اعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی اور مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما احسن اقبال کی ضمانت کے بارے میں نیا دور سے گفتگو کرتے ہوئے سینئر صحافی محمد ضیاالدین کا کہنا تھا کہ یہ ضمانت تو ملنا ہی تھی لیکن لگتا ہے کہ نواز شریف کو علاج کے لئے ملک سے باہر بھیجنے کے حوالے سے حکومت نے جو مؤقف لیا تھا، وہ اس سے پیچھے ہٹ رہی ہے۔ ضیاالدین صاحب کا کہنا تھا کہ مسئلہ یہ ہے کہ ہمارے یہاں اگر کسی پر کوئی کیس بنے تو ثبوت اکٹھا کرنے کی ذمہ داری جن پر ہوتی ہے، وہ نا اہل ہیں۔ اگر کیس میرٹ پر بھی ہو تب بھی شواہد اکٹھے نہیں ہو پاتے۔ اور اگر شواہد جمع کر لیے جائیں تو ہمارا استغاثہ کا نظام اور استغاثہ کے وکلا خاصے کمزور ہیں اور یہی وجہ ہے کہ ابھی تک نیب کوئی بڑا کیس ثابت نہیں کر پایا۔

ماضی کی مثال دیتے ہوئے ضیاالدین کا کہنا تھا کہ ایون فیلڈ کیس میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ اس کیس میں تو کوئی کرپشن ہے ہی نہیں۔ فلیگ شپ کیس میں نواز شریف کو بری کر دیا گیا جبکہ وڈیو کیس تاحال نہ ثابت ہوا اور نہ برخاست۔

نیب نے بطور ایجنسی، باربار یہ ثابت کیا ہے کہ وہ حکومت وقت سے ہدایات لے رہی ہے کیونکہ جتنے بھی بڑے کرپشن کے کیسز بنے ہیں، وہ سارے حزب اختلاف کے لیڈرز کے خلاف بنائے گئے ہیں، البتہ ثابت کوئی کیس نہیں کیا گیا۔ ضیا الدین صاحب کا کہنا تھا کہ اب یہ سلسلہ بند ہو جانا چاہیے اور حکومت اور حزب اختلاف کو مل کر نیب قوانین ٹھیک کرنے کی ضرورت ہے تاکہ نیب کے کام کرنے کا طریقہ مزید متنازع نہ ہو۔

اس بارے میں سینیئر صحافی مرتضیٰ سولنگی کا کہنا تھا کہ یہ ن لیگ کے لئے خوشی کی خبر ہے کہ اس کے دو سینیئر رہنماؤں کو ضمانت مل گئی۔ ان کا کہنا تھا کہ جس طرح کے الزامات دونوں رہنماؤں پر تھے اور جس طرح نیب میں کارروائی ہوئی، یہ بات یقینی تھی کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے انہیں ضمانت پر رہا کر دینا ہے۔

مرتضٰی سولنگی کا مزید کہنا تھا کہ سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور ن لیگ کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال، دونوں ہی کافی سرگرم اور مدلل انداز کے حامل ہیں اور ان کی رہائی مسلم لیگ کو ٹی وی ٹاک شوز، پریس کانفرنسز اور پارلیمنٹ میں کافی مدد فراہم کرے گی۔

حکومت پنجاب کے بارے میں بات کرتے ہوئے سینیئر صحافی کا کہنا تھا کہ پنجاب حکومت نے اپنے طور پر نواز شریف کو واپس بلانے کا فیصلہ کر تو لیا ہے لیکن جب تک لندن کے ڈاکٹرز نواز شریف کی صحت کو خطرے سے باہر قرار نہیں دے دیتے، سابق وزیر اعظم کو وطن واپس لانا ممکن نہیں ہے۔

مرتضیٰ سولنگی کا مزید کہنا تھا کہ اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ حکومت جانے والی ہے یا کوئی ان ہاؤس تبدیلی آنے والی ہے کوینکہ ن لیگ کی قیادت میں سے آوازیں آ رہی ہیں کہ وہ ایسی کسی کوشش کا حصہ نہیں بنے گی کیونکہ اس وقت ملک جتنے بحرانوں کا شکار ہے، ایسے میں کارکردگی دکھانا ممکن نہ ہوگا۔

Tags:

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *