Type to search

انسانی حقوق خبریں مذہب

پنجاب پولیس کی جانب سے احمدیوں کی قبروں کی بے حرمتی

خوشاب: پنجاب پولیس نے اپنی روایتی بربریت کا مظاہرہ کرتے ہوئے چک 2 ٹی ڈی اے، ضلع خوشاب میں احمدی قبرستان میں تین کتبوں کو ٹھوکریں مار کر گرا دیا۔

اطلاعات کے مطابق یہ کتبے احمدیوں کے قبرستان میں تین عدد قبروں پر لگے ہوئے تھے جنہیں چند مذہبی انتہا پسندوں کے ایما پر پولیس اہلکاروں نے گرایا۔

اس واقعے پر صحافی مہر تارڑ نے تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ احمدیوں کو پاکستان میں چین سے جینے نہیں دیا جاتا، کم از کم قبروں میں تو سکون لینے دیا جائے۔

انہوں نے لکھا کہ احمدیوں کی قبروں کی بے حرمتی غیر اسلامی اور غیر انسانی فعل ہے۔

مہر تارڑ نے وزیر اعظم عمران خان اور وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری کو ٹوئٹر پر ٹیگ کر کے سوال پوچھا کہ کیا وہ اس سلسلے میں کچھ کریں گے؟ قبروں کی بے حرمتی کے خلاف کوئی حکم جاری کیا جائے گا؟

یاد رہے کہ 1974 میں دوسری آئینی ترمیم کے ذریعے پاکستان میں احمدیوں کو آئینی طور پر کافر قرار دیا گیا تھا۔ لیکن قانونی طور پر بھی انہیں وہ تمام حقوق حاصل ہیں جو ریاست کے قانون کے مطابق اسلام کے علاوہ کسی بھی دوسرے مذہب کے ماننے والوں، یعنی ہندوؤں، سکھوں، مسیحیوں اور دیگر غیر مسلم پاکستانیوں کو حاصل ہیں۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *