Type to search

تجزیہ کورونا وائرس

کورونا پہ قابو پا بھی لیا گیا تو آنے والے سالوں میں دنیا اپنا رخ بدل چکی ہوگی

جب تک یہ تحریر آپ تک پہنچے گی کرونا وائرس میں مبتلا لوگوں کی تعداد دنیا بھر میں بڑھ چکی ہوگی کیونکہ یہ تیزی سے پھیلنے والی بیماری ہے اور مرنے والے لوگوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہو چکا ہوگا۔ میں بھی ان میں سے ہو سکتا ہوں۔ لمحہ بہ لمحہ دنیا میں صورت حال بدل رہی ہے جو کہ میری زندگی کا ڈرا دینے والا اور حیران کر دینے والا تجربہ ہے۔ چند روز پہلے تک نئے اور پرانے سیاسی معاملات دنیا میں خبروں کا موضوع تھے۔ پاکستان میں بھی روز رات کو گھسا پٹا بندر تماشا ہماری اسمبلی میں اور پھر ٹی وی سکرینوں پہ ہوتا۔ اینکر ڈگڈی بجاتے اور تماشہ شروع۔ لیکن کرونا نے سب کچھ بدل کر رکھ دیا۔ نہ ڈگڈی نہ تماشہ ہے نہ دعوے ہیں نہ مستقبل کا رونا ہے۔ بس لمحہ موجود ہے کہ شاید میرے لئے کل یہ رنگ و بو کی دنیا نہ ہو۔ کون جانتا ھے۔ اور جو بچ جائیں شاید انہیں بھوک اور روزگار کے لالے پڑ جائیں۔ اگر کرونا پہ قابو پا بھی لیا گیا تو آنے والے سالوں میں دنیا اپنا رخ بدل چکی ہوگی۔

لگتا ہے اب شاید ایسا کچھ نہ رہے جسکے ہم عادی ہو گئے تھے یا عادی بنا دئیے گئے تھے۔ یقیناً بہت سے نئے سوال جنم لے چکے ھیں اور ان سوالات کے جواب مانگے جائیں گے یا ان سوالات کے جواب ڈھونڈے جائیں گے۔ جو بنیادی سوال جنم لے چکا ھے کہ ہم کس حد تک اپنے حکمرانوں کی پالیسیوں کی وجہ سے محفوظ ہیں؟ حکمران طبقہ کہاں تک لوگوں کی بھلائی چاہتا ہے؟ جمہوری قدریں کہاں تک حکمرانوں کو جواب دہ بناتی ہیں؟ وسائل کہاں خرچ ھونے چاہئیں اور کہاں خرچ ہوتے ہیں؟ ایک عام آدمی جو زندگی بسر کرتا ہے اس پہ اس کا کتنا حق ہے؟ کیا اب زندہ باد نعروں پہ زندہ رہا جاسکتا ہے؟ کیا مذہب کا دیا ہوا سیاسی نظام ایک عام آدمی کے بنیادی حقوق کا تحفظ کر سکتا ہے؟ ایسے ڈھیروں سوالات جنم لے چکے ھیں اور ڈھیروں سوالات جنم لیں گے۔

بنیادی سوال جو اب صاحب اقتدار سامنا کریں گے کہ معاشی معاملات میں عام لوگوں کی رائے اور ترجیحات کا کتنا حصہ ہوگا اور خارجہ امور میں عام لوگوں کی رائے کا کتنا احترام کیا جائے گا کہ وہ اپنے اردگرد کے ساتھ کیسا برتاؤ چاہتے ہیں؟

آپ کی بات بجا ایسا سب کچھ دنوں میں ہونے والا نہیں۔ صاحب اقتدار کرونا سے پہلے موجود حالات کو برقرار رکھنے کا ایڑی چوٹی کا زور لگائیں گے اور وقتی طور پہ کامیاب بھی ہونگے۔ مگر اوپر اٹھائے گئے سوالات بھی اب پیچھا چھوڑنے والے نہیں۔

ہمیں کیا چاہیے؟ دنیا بھر میں نااہلیت اور سکہ شاہی کا ڈھونگ اب چلنے والا نہیں۔ اب کرونا نے کہہ دیا اور بھرے مجمے میں کہہ دیا ارے بادشاہ تو ننگا ھے۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *