Type to search

بلاگ تجزیہ کورونا وائرس

افواہ پھیلی ہے کہ وبا نہیں کوئی؛ کرونا وائرس اور ہماری غیرسنجیدگی

  • 10
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
    10
    Shares

نسل انسانی کو پہلی بار وبا کا سامنا نہیں۔ اس سے قبل بھی کئی ایک وبائیں مختلف ادوار میں دنیا کے ایک بڑے حصے کو متاثر کر چکی ہیں۔ علاج دریافت ہونے تک احتیاط ہی واحد راستہ تھا جس کی بنا پر بیماری کا شکار افراد کی شرح مختلف معاشروں میں مختلف رہی۔ حالیہ کرونا وبا ایک مریض سے شروع ہوکر دنیا کے دو سو سے زائد ممالک میں پھیل چکی ہے۔ بہت سے ممالک میں وائرس اجتماعی نااہلی کے باعث، خوفناک رفتار سے بڑھتے ہوئے اپنا خراج وصول کر رہا ہے۔ جبکہ کچھ ممالک میں مضبوط حکومتی کوششوں اور سماجی تعاون سے وبا کو نہ صرف محدود کیا گیا بلکہ خاتمے کا اعلان کر دیا گیا ہے۔

کرونا وائرس کی وبا پاکستان میں پہنچی تو ابتداً حکومت، انتظامیہ اور عوام نے کسی حد تک ذمہ داری کا مظاہرہ کیا، جس کے باعث وائرس کے محدود رہنے کی صورت میں خاطر خواہ نتائج بھی ملے۔ لیکن جلد ہی احتیاط سے اکتاہٹ، سیزن نکل جانے کے خوف، سازشی چورن بیچنے کے لالچ نے مجبور کیا۔ مختلف حلقوں کے دباؤ میں آ کر قوت فیصلہ سے تہی حکومت نے بھوک کا خوف دلا کر اجتماعی مدافعت کی غیر اعلانیہ پالیسی اپنائی۔ یہ فیصلہ ایسے وقت میں کیا گیا جب وبا پنجے گاڑ چکی تھی، لیکن کیا کیجیے کہ حکومت، مذہبی، تجارتی اور سماجی حلقوں نے جھوٹ کو ہتھیار بنا لینے کا فیصلہ کیا۔ ایک کے بعد دوسرے حلقے نے اپنی دوکان داری کی دہائی دی۔ حفاظتی تدابیر پہ عمل کے کھوکھلے وعدے کئے، اور کرونا روکنے کی بجائے پھیلانے کی کاوشیں زیادہ نظر آئیں۔

کچھ پڑھے اور سنے جانے والے حضرات نے زبان کی کمائی بڑھانے کو جھوٹ بیچا تو عوام نے سرے سے حفاظتی انتظامات کو ہی مذاق بنا ڈالا۔ تادمِ تحریر وطن عزیز میں ایک لاکھ آٹھ ہزار سے زائد افراد کرونا وائرس کا شکار ہوچکے ہیں۔ ہم مریضوں کی تعداد کے حساب سے دنیا بھر میں پندرھویں نمبر پر جبکہ حفاظتی انتظامات کے حوالے سے ابتدائی سو ممالک میں بھی شامل نہیں ہیں۔

اجتماعی خودکشی کی طرف بڑھتے ہوئے سب سے مضحکہ خیز عمل ڈاکٹرز کی رائے کو تضحیک کا نشانہ بنانے کا تھا۔ جس کے نتائج صرف پنجاب میں ڈاکٹرز کے مطابق دو کروڑ مریضوں کی صورت میں ہمارے سامنے ہیں۔ حکومتی سطح پر کم سے کم ٹیسٹ ہی مریضوں کی تعداد محدود رکھنے کا حربہ ہے۔ اگرچہ ہم نے مریض اپنی آنکھوں سے دیکھنے، کسی جاننے والے کے شکار ہونے، کسی جاننے والے کی وائرس سے موت ہونے، امرا کے شکار ہونے جیسے کئی ایک غیر سنجیدہ اور بھیانک مطالبات کئے جو کہ بدقسمتی سے کرونا وائرس تیزی سے پورا کرتا چلا جا رہا ہے۔ آج حالت یہ ہے کہ ہمارے جاننے والے وائرس کا شکار ہوکر موت کے منہ میں جا رہے ہیں۔

بد قسمتی سی بد قسمتی ہے کہ جب تک وائرس چین تک محدود تھا تو چمگادڑ کھانے کا نتیجہ، یورپ پہنچا تو عذاب، سعودی عرب پہنچا تو امریکی اطاعت کی سزا، پاکستان پہنچا تو عورتوں کے لباس کی وجہ، سرمایہ داریت کی سازش، کرونا کی آڑ میں مائیکرو چپ لگانے کا منصوبہ قرار دیا گیا، ساتھ ہی ثریا ستارے کے طلوع اور اذانوں سے رک جانے کی نوید بھی سنائی گئی۔ اب جب کہ سارے ہی دعوے ایک ایک کر کے جھوٹ ثابت ہوچکے ہیں، تو نیا راگ الاپا جا رہا ہے کہ ڈاکٹر معمولی مرض میں مبتلا افراد کو زہر کا ٹیکہ لگا کر لاش ڈالروں کے عوض فروخت کر رہے ہیں۔ حفاظت کے نام پر خالی تابوت دفن کیے جا رہے ہیں اور لاشیں امریکہ بھجوائی جا رہی ہیں۔

اب تک کی کُل حکومتی کار گزاری کا حاصل، طبی ماہرین کے بغیر نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول اتھارٹی کا قیام، پے در پے متضاد حکومتی بریفننگ، انتیس ہزار بستر کا انتظام، اور جاری و ساری مضحکہ خیز سمارٹ لاک ڈاؤن ہے۔ اس تکلیف دہ صورتحال کو ہمارے اپنے ہاتھوں کی کمائی ہی کہا جاسکتا ہے۔ حکومتی، سماجی اور عوامی سطح پر ایک دوسرے اور خود اپنے آپ سے بولا گیا جھوٹ انتہائی بھیانک صورت میں آج ہمارے سامنے ہے، جس کی وحشت بڑھنے کے اشارے بہت واضح ہیں۔

بدقسمتی سے یہ ہمارا اجتماعی فیصلہ تھا کہ ڈاکٹرز اور عالمی ادارہ صحت کی دہائیاں نہ سنی جائیں، وبا کو معمولی زکام سمجھا جائے، سامراجی سازش کا راگ الاپا جائے، مسجدوں کو ویران اور معیشت تباہ کر کے غلام بنانے کی سازش سمجھا جائے، کافروں کیلئے عذاب کہا جائے، گرم موسم میں وائرس کے ختم ہونے، خیالی طور پہ مضبوط قوت مدافعت، بے بنیاد طبی ٹوٹکوں اور سمارٹ لاک ڈاؤن کے نام پہ خود کو دھوکہ دیا جائے۔ یہ ہی وجہ ہے کہ آج گھر، گھر پڑے مریضوں کو زہر کے انجکشن کے خوف سے چھپایا جارہا ہے۔

کل بچ جانیوالے مورخ کا دل یقیناً خون کے آنسو روئے گا، جب سماجی فاصلہ رکھنے، صابن سے ہاتھ دھونے، محدود رہنے، بچوں اور بڑی عمر کے افراد کو گھروں میں رکھنے جیسی سادہ تدابیر اختیار نہ کرنے کے جرم کی سزا بے شمار لاشیں لکھے گا۔ اس کا کلیجہ منہ کو آئے گا جب وجوہات لکھتے ہوئے ہمارا ایک دوسرے اور خود سے بولا جانے والا “جھوٹ” ہی ہمارا جرم لکھے گا۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *