Type to search

خبریں دہشت گردی

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف دھمکی آمیز ویڈیو، مولوی کی غلیظ گالیاں، گولی مارنے کا مطالبہ

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی بیگم سرینہ عیسیٰ نے پولیس سٹیشن سیکرٹریٹ میں یہ درخواست جمع کروائی ہے کہ ان کے شوہر کی جان کو خطرہ ہے کیونکہ ایک مذہبی عالم نے ان کو قتل کرنے کی دھمکیوں کے ساتھ یوٹیوب پر ویڈیو اپلوڈ کی ہے۔

ویڈیو میں موجود شخص کا نام آغا افتخار الدین ہے اور بیگم قاضی فائز عیسیٰ کے مطابق یہ شخص کچھ طاقتور لوگوں کے ایما پر ممکن ہے کہ ایسا کر رہا ہو۔

ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ایک سفید پگڑی اور جبہ پہنے ایک شخص آغا افتخارالدین کہہ رہا ہے کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف اور سابق صدرِ پاکستان آصف علی زرداری اسرائیلی اور بھارتی ایجنٹ ہیں۔ اس شخص نے افواجِ پاکستان کے ذمہ دار افراد کو یہ تنبیہ کی کہ اگر پاکستان کو بچانا ہے تو پھر اس عدلیہ کا بندوبست کرنا ہوگا۔

اس شخص نے ججوں کے خلاف نازیبا زبان استعمال کرتے ہوئے کہا کہ یہ جج نواز شریف اور زرداری کے ’پالتو کتے‘ ہیں۔ اور کہا کہ عدالت میں یوں ہونا چاہیے کہ مجرم کو پکڑا جائے اور اس کو سزا ہوتی ہوئی نظر آئے۔

اس شخص نے اپنی اس شر انگیزی کو احادیث کے ذریعے مذہبی جامہ پہنانے کی کوشش بھی کی جو کہ اس قسم کے غیر معروف مولویوں کا وطیرہ ہوا کرتا ہے۔

اس نے کہا کہ امیر المؤمنین کے دور میں ایک شخص کرپشن میں پکڑا گیا اور اسے تاحیات جیل میں ڈال دیا گیا تاوقتیکہ یہ شخص زسی زندان میں مر جائے۔

اس کے بعد اس ملّا نے ریاستِ مدینہ سے چھلانگ ماری کمیونسٹ چین کی طرف اور کہا کہ ہمیں چین کا فارمولہ جو کہ اس شخص کے نزدیک امیر المؤمنین (ویڈیو میں امیر المؤمنین کا نام نہیں لیا گیا لیکن جبے اور دستار سے ظاہر ہے کہ یہ شخص غالباً حضرت علیؑ کی بات کر رہا ہے) سے بھی بہتر طریقہ رکھتے ہیں۔

اس نے کہا جو بھی شخص مالی کرپشن میں پکڑا جائے، خواہ وہ نواز شریف ہو، زرداری ہو یا جسٹس قاضی فائز عیسیٰ ہو، اسے سیدھا فائرنگ سکواڈ کے سامنے کھڑا کر دیا جائے۔

مولوی نے اس کے بعد مزید کہانیاں گھڑتے ہوئے کہا کہ چین میں قانون یہ ہے کہ جو شخص کرپشن میں پکڑا جائے اسے سیدھا گولی ماری جاتی ہے اور پھر ورثا کو لاش نہیں دی جاتی، ان سے کہا جاتا ہے کہ پہلے اس گولی کے پیسے لاؤ۔

سرینہ عیسیٰ نے اپنی درخواست میں کہا ہے کہ سپریم کورٹ کے ایک جج کو قتل کی دھمکیاں دینا بدترین قسم کی دہشتگردی ہے۔ بہت سے طاقتور لوگ میرے شوہر سے جان چھڑانا چاہتے ہیں اور یہ آپ کا فرض ہے کہ ان افراد کو ڈھونڈ کر انہیں گرفتار کریں۔

بیگم قاضی فائز عیسیٰ نے درخواست میں گذارش کی ہے کہ اس شخص کے خلاف ایف آئی آر درج کر کے ان کو اس کی کاپی فراہم کی جائے۔

Tags:

You Might also Like

10 Comments

  1. Mohammad tarik جون 24, 2020

    He is new drama now we have , why not he be shooted in head as provoke common people. A feeded man put his point around judges and specific politicians.

    جواب دیں
  2. mahmood goraya جون 24, 2020

    Jahil sirf khali bakwas kar raha hai should be arrested .put in jail

    جواب دیں
  3. Gullalai جون 25, 2020

    سازش کمزور لوگوں کا کام هوتا هےمگر سازشى خود کبهى کامىاب نهىں هوتےهىں صرف دوسروں کے ناکامى پر لگے هوتے هىں۔ تمام هم وطنوں کو چاهئے که ملکى ترقى پر زور دىا جائے۔الله همارےملک سلامت رکهے

    جواب دیں
  4. انعام اعوان جون 25, 2020

    درست فرمایا آغا صاحب نے

    جواب دیں
  5. Muhammad Saleem جون 25, 2020

    All people of pakistan should be accoutable Why we are not facing the thruth. All the Bars are boycotting why because one judge is to be asked Fbhe is not guilty then go and face the court. but its mean that our all judicial system is wrong because poor is punished and rich and powerful man not be punished .Asking from all pakistani is this our courys are rights no because they make laws for powerful rish mafia not for justice . e

    جواب دیں
  6. Muhmmad جون 25, 2020

    The words stated by maulana SB in this video is the call of every Pakistani citizen now a days… every one is crying to bring in drastic reforms in judiciary, police, medical, education and in almost every sector.
    If some has advised to follow the pattern of China to stop corruption, which is obvious success and is also inline with Islamic rules, he should be praised for the patriotic sentiments. Such thoughts will be only un-welcomed by biased thoughts and brain washed elements…after all who is the one one who doesn’t like a prosperous Pakistan for himself and the generation s to come..decision pending with nation….

    جواب دیں
  7. Majid khan جون 25, 2020

    This Maulvi has rightly said that this should happen to these people

    جواب دیں
  8. Hussain Safdar جون 25, 2020

    Chahy wo kisi b maktab se ho yh dkho kah kia rha. Na k kah kon raha hai. Agr is mulk me big names ko saza ni hoty judiciary me revolutionary expamlesni bnaye gy. Halaat aur accountablity pr ak sath he vhlty rhy gy.

    جواب دیں
  9. Baqir جون 26, 2020

    There is nothing wrong said, justice for every one,some cases of high up are geared and favourably decided by courts out of turn.we should reshape an.
    Go for

    جواب دیں
  10. امیر قدیر جون 27, 2020

    یہ نجس انسان خود *** ہے یہودیوں کا جو پاکستان کے سچے اور ایماندار جج کے بارے میں ایسی باتیں کر رہا ہے اس گند کو یہ نہیں پتہ کہ بغیر ثبوت کسی پر الزام لگانا کتنا بڑا جرم ہے اور جو بھی یہ کام کرتا ہے اصل میں کرپٹ وہ ہوتا ہے اور اسے وہی سزا ملنی چاہیے جو اس جرم کی ہے

    جواب دیں

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *