Type to search

شاعری عوام کی آواز

رات خوشبو کے کسی دیس سے ہو آیا ہوں

رات خوشبو کے کسی دیس سے ہو آیا ہوں 

روح اوڑھے ہوئے بیٹھی ہے وہ خوشبو چادر

اور اُجلے سے وہ پتے میری آنکھوں پہ گرے

میں کہیں بھول نہ جاؤں وہ اک ٹھنڈا جھرنا

جس کے چھینٹوں نے چُھوہا تھا میرا اُبلا سینہ

مجھ کو کچھ یاد ہے مدھم سا وہ سُر کا سنگم 

ان سنے گیت، وہ رس گھولتی نظمیں، غزلیں

تھی تصور کی وہ دنیا تو اُسے ہونے دو

کچھ پہر رنگ رہا یہ کوئی نعمت کم ہے؟

اب جو جاگا ہوں تو اک آگ کا دریا آگے

درد ہی درد ہے، اک رنج بپا رہتا ہے

مجھ کو خوشبو کے اُسی دیس میں جا بسنا ہے 

یہ جو کچھ دیر کی ظلمت ہے گزر جائے گی

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *