Type to search

خبریں سیاست

مولانا فضل الرحمٰن کے بھائی کی کراچی میں بطور ڈی سی تعیناتی کیسے ہوئی؟: ‘مولانا نے آصف زرداری سے سفارش کی؟’

سندھ سے متعلق سیاست میں اس وقت ایک بار پھر بھونچال آگیا ہے۔ اس بار سندھ کے سیاسی سمندر میں اٹھنے والے مد و جزر میں مولانا فضل الرحمٰن  مرکزی کردار کے طور پر سامنے آئے ہیں جب کہ معاملہ انکے بھائی ضیا الرحمٰن کی  وسطی کراچی کے ڈپٹی کمشنر کے طور پر تعیناتی کا ہے۔ جس پر تحریک انصاف اور ایم کیو ایم سمیت سندھ کی دیگر پارٹیوں نے بھر پور احتجاج کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور ابتدائی گولہ باری شروع کر دی گئی ہے۔ تاہم معاملہ ہے کیا؟ کیا کسی سیاسی شخصیت کے رشتہ دار کی سرکاری اسامی پر تعیناتی خلاف قانون ہے؟ کیا ضیا الرحمان کی تعیناتی خلاف قانون ہے ؟ کیا اس معاملے پر کوئی سیاسی رابطے کیے گئے جس کے فیض یہ تعیناتی ہوئی؟ اور سب سے بڑھ کر  خیبر پختونخوا سے تعلق رکھنے والے فضل الرحمان کے بھائی ضیاالرحمان سندھ میں کیا کر رہے ہیں؟

ان سب سوالوں کے حوالے سے ایکسپریس ٹریبیون نے اندر کی کہانی شائع کی ہے۔ اس کہانی میں بہت سے انکشافات کئے گئے ہیں۔ ایکسپریس ٹریبیوں کی اس خبر میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ فضل الرحمٰن کے بھائی ضیا الرحمٰن  کی بطور ڈپٹی کمشنر ضلع وسطی کراچی تعیناتی فضل الرحمٰن اور آصف علی زرداری کی حالیہ ملاقات میں کی جانے والی خصوصی سفارش کی وجہ سے ہوئی۔

مبینہ طور پر اس ملاقات میں فضل الرحمٰن نے آصف علی زرداری سے درخواست کی کہ خیبر پختونخوا حکومت بر خلاف میرٹ انکے بھائی کو صوبے میں کہیں بھی ڈپٹی کمشنر کی آسامی پر تعینات  نہیں کر رہی۔ انکے بھائی جو کہ پراونشل مینجمنٹ سروسز کے گریڈ 19 کے افسر ہیں وہ سندھ میں ڈیپوٹیشن پر ہیں۔ سو فضل الرحمٰن نے کہا کہ ان کے بھائی کو سندھ میں ہی اکاموڈیٹ کردیا جائے۔

اس پر پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت نے وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ سے اس درخواست پر عمل کرنے کے لئے کوئی راستہ ڈھونڈنے کی ہدایت کرتے ہوئے معاملہ بھجوا دیا۔ خبر کے مطابق مراد علی شاہ ابتدا میں تو اس معاملے پر تذب ذب کا شکار رہے تاہم انہوں نے صوبائی وزارت قانون اور دیگر ماہرین قانون سے قانونی رائے لینے کے بعد اس سمری کی اجازت دے دی۔

خبر کے مطابق سندھ پراونشل مینجمنٹ سروسز کے افسران اس تعیناتی پر سیخ پا ہیں ۔ ان کے مطابق یہ سندھ ہائی کورٹ کے اس فیصلے کی خلاف ورزی ہے جس میں کہا گیا تھا کہ دیگر صوبوں کی صوبائی انتظامیہ کے افراد سندھ میں کام نہیں کرسکتے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے اراکین جلد ہی اس کو چیلنج کریں گے۔

دوسری جانب ایم کیو ایم اور پی ٹی آئی سندھ کے رہنماؤں نے اس حوالے سے ہر فورم پر بات کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ہر صورت اس تعیناتی کو کالعدم کروا کر ہی رہیں گے۔

دوسری جانب سندھ کے مشیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ  نے کہا ہے کہ یہ تعیناتی مکمل طور پر قانونی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ کے پاس اختیا رہے کہ وہ کسی بھی صوبے سے  افسران کی تعیناتی حاصل کرسکتے ہیں۔

ساتھ ہی جمیعت علما اسلام ف کے رہنما حافظ حمد اللہ کا کہنا ہے کہ ضیا الرحمٰن ایک قابل افسر ہیں اور میرٹ کے مطابق ان کی تعیناتی کی گئی ہے۔ یہ ایک انتظامی معاملہ ہے جسے سیاسی رہنماؤں اور فضل الرحمٰن سے مت جوڑا جائے۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *