Type to search

انسانی حقوق بین الاقوامی سیاست خبریں

جمال خاشقجی قتل کیس: عدالت نے ملزمان کے لیے عمر قید کی سزا ختم کر دی

سعودی عرب کی ایک عدالت نے صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے نا معلوم مدعا علیہان کے خلاف عمر قید کی سزا کو سات سے بیس سال کے درمیان بدل دیا۔

پیر کو ایک سعودی عدالت نے اس مقدمے کا حتمی فیصلہ سناتے ہوئے جس میں واشنگٹن پوسٹ کے کالم نگار کو سعودی ہٹ اسکواڈ کے ہاتھوں ہلاک کر دیا گیا گیا تھا، اختلاف رائے سے متعلق صحافی جمال خاشقجی کی ہلاکت پر پانچ ملزمان کی سزائے موت کو کالعدم قرار دے دیا۔

سرکاری میڈیا کے مطابق ، عدالت نے پانچ افراد کو 20 سال قید کی سزا سنائی اور تین افراد کو سات سے دس سال کے درمیان کی سزا سنائی گئی۔ سعودی عرب کے قونصل خانے میں ترکی میں رونما ہونے والے ان آٹھ افراد کی شناخت نہیں ہوسکی ہے جو خاشقجی کے قتل میں ملوث تھے۔ یہ فیصلہ اس وقت سامنے آیا ہے جب خاشقجی کے بیٹوں نے مئی میں کہا تھا کہ انہوں نے قاتلوں کو “معاف” کر دیا ہے ، اس اقدام کو اقوام متحدہ کے ایک ماہر نے “انصاف کا تماشہ”  قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے۔

جمال خاشقجی 2 اکتوبر ، 2018 کو استنبول میں قونصل خانے کا دورہ کرتے ہوئے لاپتہ ہوگئے تھے۔ بعد میں ترک حکام نے انکشاف کیا کہ اسے ایک سعودی  ٹیم نے قونصل خانے کی عمارت کے اندر قتل کر دیا تھا۔ خاشوگی کی لاش اب تک دریافت نہیں ہو سکی۔ اس مقدمے کی انسانی حقوق کے گروہوں نے وسیع پیمانے پر مذمت کی تھی جنھوں نے نوٹ کیا تھا کہ نہ ہی کوئی اعلی عہدیدار اور نہ ہی کسی فرد کو اس قتل کا حکم دینے اور اسکی ذمہ داری قبول کرنے کا ذمہ دار ظاہر کیا گیا ہے۔ عدالت کی آزادی پر بھی انسانی حقوق کے گروہوں کی طرف سے سوال ُاٹھایا گیا تھا۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *