Type to search

انسانی حقوق جرم خبریں

پشاور میں خواجہ سراؤں پر ظلم کا ایک اور واقعہ، گولی مار کر ایک قتل، ایک کو زخمی کر دیا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پشاور کے علاقے پلوسی میں ایک خواجہ سرا خاتون کو نامعلوم افراد کی طرف سے گولیاں مار کر قتل کر دیا گیا جبکہ ایک خواجہ سرا اس دوران زخمی۔

خواجہ سرا جوڑے پر نقاب پوش افراد کی جانب سے ُاس وقت حملہ کیا گیا جب وہ پشاور کی مضافات سے ایک تقریب سے واپس لوٹ رہے تھے۔

خواجہ سراوں کے حقوق کے لیے کام کرنے والے ایک گروپ، ٹرانس ایکشن کا کہنا ہے کہ ُگل پانڑہ کو چھ گولیاں ماری گئی۔ اسے شیر پاو ہسپتال پہنچانے کی کوشش کی گئی مگر زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے ُگل پانڑہ جاں بحق ہو گئیں۔ جبکہ دوسری خواجہ سرا خاتون کو شدید ذخمی حالت میں خیبر ٹیچنگ ہسپتال پہنچا دیا گیا۔

اطلاعات کے مطابق پولیس نے معاملے کی تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔ خواجہ سراوں کو ُان کی جنس کی وجہ سے مسلسل تشدد اور نفرت کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔

اطلاعات کے مطابق ، صرف خیبر پختونخواہ میں گذشتہ چار سالوں کے دوران ٹرانسجینڈر برادری کے تقریبا 50 سے زیادہ افراد ہلاک اور 300 سے زائد افراد کو جنسی طور پر ہراساں کرنے اور حملہ کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ مزید یہ کہ صنفی امتیازی سلوک نے انہیں معاشرے میں جسم فروشی میں ملوث ہونے پر مجبور کردیا ہے۔

ہیومن رائٹس واچ (ایچ آر ڈبلیو) نے ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ سنہ 2016 میں خواجہ سرا خواتین پر حملوں کے سلسلے کے بعد ، خیبر پختونخوا حکومت نے وفاقی حکومت سے خواجہ سرا لوگوں کو تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ کیا۔ 2018 میں ، پاکستان کی سینیٹ نے ایک بہت بڑا خواجہ سرا حقوق بل پاس کیا جس میں ٹرانس لوگوں کو تعصب اور ہراساں کرنے کی واضح طور پر پابندی ہے ، اور صحت اور عوامی مقامات تک ان کے حقوق کے تحفظ کا تحفظ کیا گیا ہے۔ 2019 میں ، وزیر اعظم عمران خان نے ہیلتھ کیئر تک رسائی کا پروگرام شروع کیا جس میں خواجہ  سرا افراد کو خاص طور پر شامل کیا گیا تھا۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *