Type to search

خبریں سیاست

گلگت بلتستان پر آرمی چیف کی اپوزیشن سے ملاقات: سرتاج عزیز نے اندر کی کہانی بتا دی

پاکستان مسلم لیگ کے سینئر رہنما اور سابق وزیر خارجہ سرتاج عزیز نے گزشتہ جمعے فرائیڈے ٹائمز میں ایک کالم لکھا ہے۔ اس کالم میں انہوں نے گلگت بلتستان کے مسئلے پرتاریخی حقائق کا بیان کرتے ہوئے ایک تفصیلی جائزہ پیش کیا۔ انہوں نے بتایا کہ 2015 میں جب نواز شریف وزیر اعظم تھے تو انہوں نے گلگت بلتستان کو صوبے کا درجہ دینے اور پاکستان میں شامل کرنے کے حوالے سے ایک کمیٹی تشکیل دی۔ اس کمیٹی کا کام تھا کہ وہ گلگت بلتستان کی آئینی اور قانونی حیثیت کا جائزہ لے اور جانچ پڑتال کرے کہ آیا گلگت کی موجودہ حدود کشمیر سے متجاوز ہیں یا نہیں۔ علاوہ ازیں مسئلہ کشمیر پر اقوام متحدہ کی قراردادوں کو مد نظر رکھتے ہوئے آئینی اور انتظامی اصطلاحات تجویز کی جائیں۔

سرتاج عزیز نے بتایا کہ اس کیمٹی نے اپنی سفارشات پیش کیں بالآخراس عمل کا اختتام ایک نئے گورنمنٹ آف گلگت بلتستان آرڈدر 2018 سے ہوا جسے مئی 2018 میں جاری کر دیا گیا۔ تاہم گلگت کو باقاعدہ صوبہ بنانے کے کچھ بقیہ اور اہم امور مسلم لیگ ن کے دور حکومت ختم ہونے کے باعث مکمل نہ ہو سکے۔

سرتاج عزیز کے مطابق موجودہ حکومت نے اس پر کوئی پیش رفت نہیں کی مگر جیسے ہی گلگت کے انتخابات کا وقت پہنچا تو حکومتی ایوانوں میں سے کسی نے شوشا چھوڑدیا کہ اگر گلگت کو مکمل صوبہ بنانے کا اعلان کر دیا جائے تو موجودہ حکومت کو انتخابات میں اس کا بے حد فائدہ پہنچ سکتا ہے۔ اسی امید کے ساتھ موجودہ حکومت نے آرمی چیف کو تمام سیاسی جماعتوں کے رہنماوں کا اجلاس بلا کر انہیں راضی کرنے کی درخواست کی۔ آرمی چیف سے ملاقات میں دونوں بڑی اپوزیشن جماعتوں نے گلگت کو آئینی صوبہ بنانے کی حمایت کی۔ تاہم انہوں نے اس بات پر زور دیا گیا کہ با ضابطہ صوبہ بنانے سے قبل مطلوبہ قانون سازی15 نومبر کو ہونے والے انتخابات کے بعد کی جائے۔

اس کالم پر تبصرہ کرتے ہوئے معروف صحافی اور ڈان نیوز کے سابقہ ایڈیٹر سیرل المیڈا کا کہنا ہے کہ سیاسی جماعتوں کی آرمی چیف سے ملاقات خود تحریک انصاف کو فائدہ پہچانے کیلئے تھی جسے سرتاج عزیز نے بہت اچھے اندازمیں بیان کیا۔

واضح رہے کہ 20 ستمبر کو ہونے والی پارٹیز کانفرنس کے بعد وفاقی وزیر شیخ رشید نے دعوی کیا تھا کہ اپوزیشن اراکین آرمی چیف سے ملاقات بھی کرتے ہیں اور ان کے خلاف بیانات بھی دیتے ہیں۔ تاہم سرتاج عزیز کے اس مضمون سے اخذ کیا جاسکتا ہے کہ یہ ملاقات آرمی چیف کی حکومت کو مدد فراہم کرنے کیلئے طے کی گئی تھی۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *