Type to search

انسانی حقوق بین الاقوامی خبریں مذہب

فرانسیسیوں کو قتل کرنا مسلمانوں کا حق ہے: مہاتیر محمد

ملائشیاء کے سابق وزیر اعظم مہاتیر محمد نے جمعرات کو اپنی ایک ٹویٹ میں ہلچل مچا دی ہے جہاں ان کی طرف سے  فرانسیسی عوام پر مسلمانوں کے پر تشدد کاروائیاں کرنے کا جواز پیش کیا گیا ہے حالانکہ وہ لوگوں کو مختلف ثقافتوں کا احترام کرنے کی تلقین کرتے رہے تھے۔ اپنی ٹوئیٹر تھریڈ کا آغاز انہوں نے احترام کے لفظ کے ساتھ کیا اور انہوں نے ایک واقعہ کے حوالہ دیا جہاں ایک فرانسیسی استاد سیموئیل پیٹی کو کلاس میں حضرت محمد ﷺ کا کارٹون کلاس میں دکھانے پر اسکے 18 سالہ شاگرد نے اسکا سر قلم کر دیا تھا۔ مغربی کلچر کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مغرب دوسروں کے اقدار کو احترام نہیں کرتا اسی لئے تمام ثقافتوں کو ایک دوسرے کا احترام کرنا چاہیئے اور مغربی کلچر نہیں اپنانا چاہیئے۔

ایک موقع پر انہوں نے پیٹی کے قتل کی مذمت کرتے ہوئے کہا قتل کو بطور مسلمان قبول نہیں کرتا تاہم بعد میں انہوں نے لکھا کہ ماضی میں ہوئے مظالم کی بنیاد پر مسلمانوں کو بدلہ لینے اور فرانسیسیوں کو قتل کرنے کا حق حاصل ہے۔

اپنے بات کو مزید بڑھاتے ہوئے انہوں نے لکھا کہ مسلمانوں نے بڑے پیمانے پر آنکھ کے بدلے آنکھ کے قانون پر عمل در آمد نہیں کیا۔

مہاتیر محمد کی ٹوئیٹ تب سامنے آئی جب فرانس کے شہر نائس میں واقع ایک چرچ میں ایک حملہ آور نے اللہ اکبر کے نعرے لگاتے ایک عورت اور دو شہریوں پر حملہ کر دیا۔

مہاتیر محمد نے فرانسیسی صدر پر تنقید کی کہ جب اس نے سکول میں قتل کرنے والے لڑکے کو اسلام کے ساتھ جوڑا انہوں نے اسے صریحاً ایک الزام قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ فرانسیسی صدر یہ نہیں دکھا رہا کہ وہ مہذب ہے۔ وہ سکول میں ہوئے قتل کا ذمہ دار اسلام کو ٹھہرا رہا ہے حالانکہ ایسی تعلیمات اسلام میں نہیں ہیں۔ اور ہر چیز کا ذمہ دار اسلام کو ٹھہرانا انکی پرانی فطرت اور عادت ہے۔

پاکستان اور کویت جیسے متعدد مسلم ممالک ، جن کی سربراہی ترکی کے صدر رجب طیب اردگان نے کی تھی ، نے حال ہی میں میکرون پر دہشت گردوں کے حملے کے بارے میں اپنی حکومت کے ردعمل کا اظہار کیا تھا ، جس میں مشتبہ اسلامی انتہا پسندوں کے گھروں پر چھاپے اور ایک مسجد کو بند کرنا بھی شامل ہے۔

مہاتیر محمد نے آزادی اظہار رائے کے استعمال اور خواتین کے لباس میں ہونے والی تبدیلیوں کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا جسے مغربی اقدار سمجھ کر متاثر کیا جارہا ہے۔

انہوں نے لکھا کہ “آپ کسی آدمی کے پاس نہیں جاسکتے اور اس پر لعنت بھیج نہیں سکتے ہیں کیوں کہ آپ آزادی اظہار پر یقین رکھتے ہیں ،”

انہوں نے مزید لکھا “نئے خیالات سے پریشانی یہ ہے کہ آنے والے دیر سے نئی تشریحات میں اضافہ کرتے ہیں۔ ، خواتین کی آزادی کا مطلب انتخابات میں ووٹ ڈالنے کا حق ہے۔ آج ہم مردوں اور عورتوں کے مابین ہر اس چیز کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔”

انہوں نے مزید لکھا کہ ملائیشیا “پرامن اور مستحکم” ہے کیونکہ لوگ دوسروں کے ساتھ حساس ہونے کی ضرورت سے آگاہ ہیں۔

مہاتیر محمد نے اپنے 1.3 ملین فالورز کو یہ بھی بتایا: “ہم اکثر مغرب کے طریقوں کی نقل کرتے ہیں۔ ہم ان کی طرح لباس زیب تن کرتے ہیں ، ہم ان کے سیاسی نظام ، یہاں تک کہ ان کے کچھ عجیب و غریب طرز عمل بھی اپناتے ہیں۔ لیکن ہماری اپنی اقدار ہیں ، نسلیات اور مذاہب کے مابین جداگانہ ہیں ، جنہیں ہمیں برقرار رکھنے کی ضرورت ہے۔”

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *