Type to search

حقوقِ نسواں ویڈیوز

کیفے چائے میٹ کی مالک شیزہ مشتاق

شیزہ مشتاق کہتی ہے کہ جب میں نے منصوبہ بندی شروع کی تو بہت تنقید کا سامنا تھا کہ تم کیسے کروگی یہ تو مردو ں کا معاشرہ ہے یہاں تمھیں کام نہیں کرنے دیا جائے ، تم کیفے کھولوں گی تو تمھیں چینی لانی ہوگی، تمھیں چائے لانی ہوگی ، تمھیں چکن لانے ہوگی ، تم یہ کام نہیں کرپاوگی مطلب ہر جگہ سے تنقید کا سامنا تھا جس سے میری ہمت کم پڑے اور ارادہ کمزور ہوجائے ۔ وہ مانتی ہیں کہ میں کئی جگہوں پر کمزور پڑگئی مگر میں دوبارہ سے ہمت کرکے اُٹھ جاتی تھی اور آخر میں اس کوشش میں کامیاب ہوگئی۔ وہ کہتی ہیں ہمارے سماج میں لڑکیوں کو ایک نظر سے دیکھا جاتا ہے کہ اگر وہ گھر سے نکلتی ہے تو وہ خراب ہے۔
Tags:

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *