Type to search

تجزیہ

میں غدار نہیں ایٹمی جنگ کا مخالف ہوں: پرویز ہود بھائی کا جنرل امجد شعیب کو جواب

معروف  پروفیسر پرویز ہود بھائی نے ہفتے کے روز اپنے  یوٹیوب چینل پر دو ویڈیوز جاری کیں ، جس میں انہوں نے ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل امجد شعیب کی ​​طرف سے  اپنے اوپر لگائے گئے الزامات کا جواب دیا اور ان الزامات کی تردید کی۔

ویڈیو کےپہلے حصے میں پرویز ہود بھائی نے ان الزامات کا جواب دیا جس میں جنرل امجد شعیب نے ان پر پاکستان مخالف ہونے اور دشمن ممالک سے تعلقات کا الزام عائد کیا تھا۔ اس سمیت دیگر تمام الزامات پر پروفیسر ہودبوائے نے ان کا براہ راست جواب دو مختلف ویڈیوز میں دیا۔

 

پروفیسر ہود بھائی نے اپنی پہلی ویڈیو جنرل امجد کے اس بیان سے اتفاق کرتے ہوئے شروع کی جس میں انہوں نے پاکستان کے پاس ایٹم بم رکھنے کی مخالفت کی تھی – بالکل اسی طرح جیسے انہوں نے کسی بھی ملک کے پاس ایٹم بم ہونے کی مخالفت کی ۔

انہوں نے برملااعلان کیا کہ وہ جنگ مخالف (اینٹی وار) ہیں اور انھیں خدشہ ہے کہ ایٹم بم ہر خطے کے لئے وسیع پیمانے پر تباہی کا باعث بن سکتا ہے۔ انہوں نے اسی موضوع پر ایک سائنسی ریسرچ کا ذکر کیا جس کا نام ’ Confronting the Bomb: Pakistani and Indian Scientists Speak Out‘ تھا اسکی ترمیم پروفیسر ہود بوائے نے کی جبکہ اس کی تشکیل میں دونوں ممالک کے سائنسدانوں نے حصہ لیا۔

اس کے بعد انہوں نے جنرل شعیب کے ان دعوؤں کا لمبا جواب دیا جس میں جنرل امجد کے مطابق انہوں نے پاکستان کے “محسن” ڈاکٹر عبد القدیر خان پر طنز کیا یا انکی توہین کی۔

انہوں نے بتایا کہ جنرل صاحب کی طرف سے لگائے گئے اس الزام کا حوالہ کئی سال پہلے ایک بدنام زمانہ اور سنسنی خیز اخبار میں دیا گیا تھا۔ اور یہ سب اس وقت ہوا جب وہ پاکستان میں بھی نہیں تھے۔

ڈاکٹر ہود بھائی نے دو خطوط بھی ظاہر کئے جن میں ان الزامات کے بعد ڈاکٹر قدیر خان نے ان سے خط و کتابت کے ذریعے سے رابطہ کیا۔ ان خطوط میں ڈاکٹر قدیر خان نے انہیں انتہائی پروفیشنل اور ذاتی احترام کے ساتھ مخاطب کیا۔

پروفیسر ہود بھائی نے پہلی ویڈیو کا اختتام ڈاکٹر عبدالقدیر خان کے ان خطوط کو پڑھتے ہوئے کیا جس میں محسن پاکستان نے انہیں مخاطب کرتے ہوئے واضح الفاظ میں لکھا کہ ’فوج نے ملک کو ہمیشہ کے لئے یرغمال بنا رکھا ہے‘۔

 

اپنی دوسری ویڈیو میں ، پروفیسر ہود بھائی نے اپنی دستاویزی فلم کے بارے میں بات کی ، جس کا عنوان تھا ’کراسنگ دی لائنز: کشمیر ، پاکستان ، انڈیا‘  یہ دستاویزی فلم 10 سال سے زیادہ عرصہ قبل ٹورنٹو یونیورسٹی کے ایک پروگرام میں دکھائی گئی تھی۔

 

پروفیسر ہود بھائی نے حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جنرل صاحب نے اتنے سالوں کے بعد بھی اسے کھودنے کے بارے میں کیوں سوچا ، حالانکہ یہ ویڈیو عوامی طور پر دستیاب تھا اور ہر کوئی اسے دیکھ سکتا ہے۔  پروفیسر ہودبوائے نے اس ویڈیو کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اپنی دستاویزی فلم میں کشمیر کی ایک “معروضی” تصویر پیش کرنے کی کوشش کی جس میں پاکستان کو بدنام کرنے کا کوئی خاکہ ڈیزائن نہیں کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ اس دستاویزی فلم میں کشمیریوں کے دکھوں کے ساتھ ساتھ ہندو انتہا پسندوں اور پاکستانی جہادیوں دونوں کے جرائم بھی دکھائے گئے ہیں۔ لہذا ، جنرل صاحب کے دعوؤں کے برخلاف ، ایسی دستاویزی فلم ہندوستان کے کہنے پر بن ہی نہیں سکتی۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایسا نہیں تھا جیسے انہوں نے کشمیر میں پاکستانی جہادیوں کے پوشیدہ کردار کو بے نقاب کیا ہو۔ اس کے بجائے ، انہوں نے کہا ، انہوں نے کشمیر کے حوالے سے صرف متعدد حقائق کی نشاندہی کی اور اس بات پر زور دیا کہ مسئلہ کشمیر کا حل جنگ میں نہیں بلکہ ایک دوسرے کو سمجھنے میں ہے۔ آخر میں ، پروفیسر ہود بھائی نے پاکستان اور اس کے عوام سے نا قابل قبول محبت کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے 1996  میں اپنی اس “فتح” کو یاد کیا ، جب انہوں نے قائداعظم یونیورسٹی کو ” لالچی سیاستدانوں ” کے ڈیزائن سے بچایا تھا۔

اپنے آخری ریمارکس میں انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ ہمیشہ نئی معلومات کی تحقیق کریں اور اس کی تصدیق کریں اور کسی بھی چیز کو حقیقت تسلیم کرنے یا یقین کرنے سے قبل اس کا خود بغود مشاہدہ کریں۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *