Type to search

خبریں

فیصل ایدھی کا مودی کے نام خط، بھارت میں کورونا بحران سے نمٹنے کیلئے مدد کی پیشکش

  • 5
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
    5
    Shares

معروفی سماجی رہنما عبدالستار ایدھی کے بیٹے اور ایدھی فاؤنڈیشن کے چیئرمین فیصل ایدھی نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کے نام خط میں بھارت میں کورونا سے پیدا ہونے والے بحران پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مدد کی پیشکش کردی۔

ایدھی فاؤنڈیشن سے جاری بیان کے مطابق فیصل ایدھی نے اپنے خط میں لکھا ہے کہ ‘ہم کورونا بحران کے باعث بھارت کے عوام پر پڑنے والے اثر پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں’۔

انہوں نے لکھا کہ ‘ہمیں اپنے ہمسایہ ملک میں کورونا کے انتہائی سنگین اثرات کا سن کر افسوس ہوا، جہاں عوام کی بڑی تعداد بے حد تکلیف میں مبتلا ہے’۔

فیصل ایدھی نے کہا کہ مشکل کی اس گھڑی میں ایدھی فاؤنڈیشن کی ہمدردیاں بھارت کے ساتھ ہیں۔

فیصل ایدھی نے بھارتی وزیر اعظم کو 50 ایمبولینس اور رضاکاروں کی ٹیم بھارت بھیجنے کی پیشکش کرتے ہوئے کہا کہ وہ خود رضاکاروں کی ٹیم کی قیادت کرنے کے لیے تیار ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ایدھی فاؤنڈیشن حالات کی سنجیدگی سے واقف ہے اور ہم بھارت کی پوری طرح مدد کے لیے تیار ہیں جبکہ بھارتی عوام کی مدد کے لیے ہماری ٹیم تمام ضروری سامان کا انتظام کر لے گی۔

چیئرمین ایدھی فاؤنڈیشن نے اپنے خط میں واضح کیا کہ ‘ہم آپ سے کسی معاونت کی درخواست نہیں کر رہے، ہماری ٹیم کو درکار ایندھن، خوراک اور دیگر ضروری سامان کا بندوبست ہم خود کر لیں گے’۔

انہوں نے کہا کہ ‘ہماری ٹیم ایمرجنسی میڈیکل ٹیکنیشنز، آفس عملے، ڈرائیورز اور معاون عملے پر مشتمل ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘مجوزہ سروس پر عملدرآمد کے لیے بھارت میں داخلے کی اجازت کے علاوہ مقامی انتظامیہ اور محکمہ پولیس کی جانب سے ضروری ہدایات کی درخواست ہے’۔

فیصل ایدھی نے خط میں لکھا کہ ‘ہم آپ کی ہدایت پر کسی ہچکچاہٹ کے بغیر کسی بھی تشویشناک صورتحال والے علاقے میں اپنی ٹیم تعینات کرنے کے لیے تیار ہیں’۔

ادارے کے بیان میں کہا گیا کہ فیصل ایدھی اجازت ملتے ہی اپنی خصوصی رضاکار ٹیم کے ہمراہ بھارت روانہ ہوجائیں گے۔

علاوہ ازیں ہندوستان ٹائمز سے بات کرتے ہوئے فیصل ایدھی نے بتایا کہ حالیہ رپورٹس میں بھارتی عوام کو درپیش مشکلات کے بعد ان کی تنظیم نے مدد کی پیشکش کی ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز بھارت میں ایک روز میں دنیا میں سب سے زیادہ 3 لاکھ 32 ہزار سے زائد کیسز سامنے آئے تھے۔

دارالحکومت نئی دہلی سمیت بھارت کے شمالی اور مغربی علاقوں کے ہسپتالوں نے نوٹسز جاری کیے تھے جن میں کہا گیا تھا کہ کورونا مریضوں کو زندہ رکھنے کے لیے ان کے پاس صرف چند گھنٹوں کی آکسیجن دستیاب ہے۔

دہلی حکومت کے آن لائن ڈیٹابیس کے مطابق دو تہائی سے زائد ہسپتال مکمل طور پر بھر چکے ہیں اور ڈاکٹروں نے مریضوں کو گھروں میں رہنے کی ہدایت کی ہے۔

بھارت میں وبا کی تیزی سے بگڑتی صورتحال کے باعث صحت کا نظام بیٹھنے کا خطرہ پیدا ہوگیا ہے۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *