Type to search

تجزیہ

ازلی دشمنوں کے مشترکہ مسائل: ‘سچ بولنے والے دونوں جانب ہی غدار کہلائے جاتے ہیں’

پاکستان اور ہندوستان کے مابین ایک ریاستی تقسیم تو آج سے 70 برس قبل کر دی گئی مگر فکری اور روایات سمیت مسائل اور بھاگ دوڑ کی تقسیم آج تک نہ ہو سکی ہے۔ ایک دوسرے سے آگے نکلنے اور ایک دوسرے پر الزام تراشی کی تاریخ تو خیر جب سے تقسیم ہوئی تب سے جاری ہے اور شاید آگے بھی جاری رہے اسی بنیاد پر 3 جنگیں بھی لری جا چکیں مگر نا تو اس سے ہم دونوں ممالک نے کچھ سیکھا نا حاصل کیا ہے۔ ازلی دشمنوں کے مسائل بھی ایک سے ہیں اور حل بھی ایک ہے مگر مجال ہے کہ دونوں جانب کی سرکاروں نے 70 برسوں میں اس حل کو اور سچائی کو تسلیم کیا ہو۔ حالانکہ پاکستان اور بھارت میں بیک وقت ہمیشہ سے ایک سچ کی آواز پر مبنی سوچ اور گرو موجود رہے ہیں مگر ان کی آواز اور بات کو ہمیشہ یا تو ملک مخالف یا بنیاد کے خلاف نظریہ اور ایجنڈا قرار دیا گیا ہے۔پاکستان یوں تو اپنی بنیاد یعنی اسلامک آئیڈلوجی پر وجود میں آنے کے باعث اسلامی قوانین اور معاملات کے پیش نظر بات کرتے ہوئے کئی باتوں کی مخالفت کرتا ہے مگر دوسری جانب ہندوستان خود کو سیکولر کہتے ہوئے آزادی اظہار رائے کا حق اپنے شہریوں اور اقلیتوں کو نہیں دیتا اور وہ بھی ایسی اقلیت جو چند ہزار افراد پر نہیں بلکہ کروڑوں افراد پر مشتمل اقلیتیں ہیں۔

پاکستان اور ہندوستان کے مابین جو معاملہ اور مسئلہ ازل سے آج تک مماثلت رکھتے ہوئے جا رہا ہے وہ آزادی اظہار کا مسئلہ ہے۔کسی بھی حکومت مخالف سوچ کو نظریے کو افراد کو ان کی سوچ کو یوں کچل دیا جاتا ہے جیسے وہ کوئی گناہ کبیرا کر بیٹھیے ہیں ہر اس شخص کو جو تاریخ میں چھپے سیاہ لبادوں کو منظر عام پر لانے اور امن سے رہنے کی بات کرے جو حکومتی پالیسیوں پر اپنی سوچ کو صحیح سمجھ کر اس کا پر چار کرے وہ پاکستان میں ایجنٹ اور ہندوستان میں دیش دروہی (اینٹی نیشنلسٹ) قرار دے دیا جاتا ہے۔

اس طرح کی درجنوں نہیں سینکڑوں مثالیں دونوں ممالک میں مشترک ہیں جہاں جس نے بھی امن اور بھائی چارے کی بات کی یا حکومت کے ظلم ستم سے تنگ آ کر آواز اٹھائی اس کے لئے کم سے کم سزا یہ طے کی گئی کہ اس کے خلافملک مخالف ہونے کا مقدمہ درج کر کے تا عمر جیل کی سلاخوں میں ڈال دیا گیا وگرنہ جان سے جانا یا غائب ہو جانا تو عام بات ہے۔گزشتہ روز بھارت کے ایک ایسے ہی ایکٹویسٹ کے حوالے سے ہندوستان اور پاکستان میں لاکھوں بندوں نے ٹویٹ کر کے ان کے نظریات سے ہم آہنگی اور ان کے ساتھ ہونے والی ریاستی زیادتی کا اظہار کیا۔سٹوڈنٹ ایکٹویسٹ شرجیل امام گزشتہ 500 سے زائد دنوں سے سلاخوں کے پیچھے ہیں ان کی ضمانتیں مختلف عدالتیں رد کر چکی ہیں ان کے خلاف ہندوستان کی مختلف ریاستوں کیں ملک مخالف ہونے کے مقدمات درج ہیں۔جبکہ ان کے کیس کا غیر جانبداری سے جائزہ لیں تو پتہ یہ لگے گا کہ وہ مسلمانوں پر ہونے والے مظالم سے تنگ آ کر اپنی سرکار سے روٹھ گئے اور شکایات کر رہے تھے بجائے اس کے کہ ریاست ان کے پاس آ کر خدشات دور کر کے ان کو گلے لگاتی ریاست نے ان کا گلا کاٹنے کو ترجیح دی۔یوں ہی آفرین فاطمہ، کنہیا کمار، عمر خالد سمیت کئی ایسے مقدمات کی لسٹ ہے جو ہندوستان میں نوجوان اور پڑھے لکھے طالبعلموں پر دائر ہیں وہ سزائیں کاٹ رہے یا خود کو اینٹی نیشنلسٹ ہونے کا طعنہ ضرور سنتے ہیں۔

پاکستان میں بھی اس طرح کے کئی کیسز موجود ہیں جن میں ادریس خٹک، عائشہ گلالئی، گل بخاری، مطیع اللہ جان، اعزاز سعید، عمر چیمہ، احمد نورانی، اسد طور، حامد میر،باباجان وہ لوگ ہیں جن کی آواز کو دنیا نے تسلیم کیا مگر پاکستان میں ان پر مقدمات درج ہوئے قاتلانہ حملے ہوئے غائب ہوئے دھمکیاں دیں گئیں۔

خٹک، جن کی عمر 56 سال ہے، طالب علمی کے زمانے سے ہی ترقی پسند سیاست سے وابستہ ہیں، اور طویل عرصے سے نیشنل پارٹی کے رکن رہے ہیں۔ وہ ایک آزادانہ محقق بھی ہیں جس نے اپنے آبائی صوبہ خیبر پختونخوا میں انسانی حقوق کے معاملات پر توجہ دی ہے۔ 23 نومبر کو،  خٹک کے بھائی نے پشاور ہائیکورٹ میں ایک درخواست دائر کی، جس میں مطالبہ کیا گیا کہ حکومت سے خٹک کے ٹھکانے کے بارے میں رپورٹ پیش کی جائے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق، پاکستان میں، لاگو ہونے والی گمشدگیوں کو فوجی پالیسیوں پر ناراضگی اور تنقید کا نشانہ بنانے کے ایک آلے کے طور پر استعمال کیا گیا ہے۔ لاپتہ ہونے والے افراد میں جن افراد اور گروہوں کو نشانہ بنایا گیا ہے ان میں سندھی، بلوچ، پشتون، شیعہ برادری، سیاسی کارکن، انسانی حقوق کے محافظ شامل ہیں، مذہبی اور قوم پرست گروہوں کے ممبران اور حمایتی، مسلح گروہوں کے مشتبہ ارکان، اور پاکستان میں مذہبی اور سیاسی تنظیموں پر پابندی عائد کرتے ہیں۔ لاپتہ ہونے پر پاکستان کے کمیشن آف انکوائری نے ستمبر 2019 میں رپورٹ کیا کہ 2،228 انفرادی معاملات حل طلب نہیں ہیں۔ انسانی حقوق کے کارکن محمد اسماعیل کو اکتوبر 2019 میں من مانی طور پر حراست میں لیا گیا تھا۔ اس سے قبل، جولائی 2019 میں، محمد اسماعیل پر ان کی بیٹی، گلالئی کے جائز انسانی حقوق کے کام کے سلسلے میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت بے بنیاد الزامات عائد کیے گئے تھے۔ اسماعیل۔ ان الزامات میں “بیرونی ممالک” سے فنڈ لینا، “دہشت گرد تنظیموں” کی مدد کرنا اور اس کے معاشرتی کام کی آڑ میں ان کے لئے کام کرنا شامل ہے۔ حمد اسماعیل کی بیٹی گلالئی اسماعیل انسانی حقوق کے محافظ ہیں جنھیں خواتین اور لڑکیوں کے حقوق کی حمایت کرنے، اور نسلی پشتون عوام کے خلاف انسانی حقوق کی پامالیوں کے خاتمے کے لئے ان کی کوششوں پر حکام کی طرف سے ظلم و ستم کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ اسے جون 2019 میں بدنامی، بغاوت اور دیگر الزامات کا سامنا کرنے کے بعد جبری روپوش ہونے پر مجبور کیا گیا تھا جو اسلام آباد میں ایک ریلی میں دیئے گئے ایک تقریر سے ہوا تھا، جس میں اس نے ایک 10 سالہ بچی کے ساتھ عصمت دری کے معاملے میں انصاف کا مطالبہ کیا تھا اور مئی 2019 میں قتل کیا گیا اور مجرموں کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کے لئے حکام کی بے عملی کی مذمت کی۔ اس کے بعد وہ امریکہ میں سیاسی پناہ مانگ رہی ہے۔ ماکتوبر 2019 میں، کمیٹی برائے پروٹیکٹ جرنلسٹس (سی پی جے) ایشیاء پروگرام کے سربراہ، اسٹیون بٹلر کو پاکستان میں داخلے سے انکار کردیا گیا تھا اور انہیں ملک بدر کردیا گیا تھا۔ لاہور کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر ایک بارڈر سیکیورٹی اہلکار نے بٹلر کو بتایا کہ ان کا صحافی ویزا درست ہے، لیکن انھیں پاکستان میں داخلے سے روک دیا گیا کیوں کہ ان کا نام وزارت داخلہ کی “اسٹاپ لسٹ میں” تھا۔ نومبر 2019 میں، پاکستانی پولیس نے ان کارکنوں کے خلاف مجرمانہ مقدمات درج کیے جنہوں نے ’اسٹوڈنٹ یکجہتی مارچ‘ کی حمایت کی ہے اور مظاہرین میں سے ایک عالمگیر وزیر کو من مانی سے حراست میں لیا۔ یہ کریک ڈاؤن پورے پاکستان میں طلبہ کے یکجہتی مارچ کے نتیجے میں ہوا۔ بابا جان اور ہنزہ سے تعلق رکھنے والے دو دیگر نوجوان کارکنان، عامر خان، اور افتخار حسین کو، انسداد دہشت گردی کی عدالت نے اگست 2011 میں حکومت کی عدم فعالیت کے خلاف عوامی تحریک میں حصہ لینے پر سزا سنائی تھی۔

ہیومن رائٹس واچ اور ایمنسٹی انٹرنیشنل انڈیا نے گزشتہ برس کہا، بھارتی حکام نے جنوری میں ذات پات پر مبنی تشدد کو بھڑکانے کے الزام میں پانچ کارکنوں کو حراست میں لیا اور متعدد دیگر کے گھروں پر چھاپے مارے۔ حکومت کو سیاسی طور پر متحرک گرفتاریوں اور انسانی حقوق کے کارکنوں کو ہراساں کرنے اور دیگر اقدامات کو روکنا چاہئے جس کا مقصد پرامن اختلاف رائے کو ٹھنڈا کرنا ہے۔

مہاراشٹرا پولیس نے ہندوستان کے انسداد دہشت گردی کے اصل قانون، غیر قانونی سرگرمیاں (روک تھام) ایکٹ (یو اے پی اے)، اور تعزیرات ہند کے سیکشن کے تحت سوڈھا بھاردواج، گوتم نولھاھا، ورنن گونسالیس، ارون فریریرا، اور ورورا راؤ کو گرفتار کیا۔ اسی دوران، پولیس نے ملک بھر میں چھاپے مارے، جن میں دلت اسکالرز کے ستیاناریانا اور آنند تلتمبدے، شہری حقوق کے کارکن اسٹان سوامی، اور صحافی کرانتھی ٹیکولا اور کے.وی. کرماناتھ کو گرفتار کیا۔ ہیومن رائٹس واچ کے جنوبی ایشیا کے ڈائریکٹر میناکشی گنگولی نے کہا، “انسانی حقوق کے کارکنوں کی تازہ ترین گرفتاریوں سے ہندوستان میں خوف و ہراس کی فضا پیدا کرنے کے لئے آزادانہ تقریر پر حکومت کے بڑھتے ہوئے حملے سے پتہ چلتا ہے۔” “عہدیدار ایک بار پھر انسانی حقوق کے محافظوں اور غریب اور پسماندہ طبقوں کے ساتھ کام کرنے والے افراد کو صرف اپنی نوکریوں کے لئے نشانہ بنا رہے ہیں۔57سالہ سوڈھا بھاردواج ایک ٹریڈ یونین کی رکن، انسانی حقوق کی وکیل، اور ریاست چھتیس گڑھ میں پیپلز یونین برائے شہری آزادیوں کی جنرل سکریٹری ہیں۔ انہوں نے مزدور حقوق، زمینی حصول سے متاثرہ پسماندہ طبقات کے لئے طویل عرصے سے کام کیا ہے اور چھتیس گڑھ میں سیکیورٹی فورسز کی خلاف ورزیوں کے خلاف بات کی ہے۔ 48سالہ ارون فریرا ممبئی میں مقیم ایک کارکن، کارٹونسٹ، اور وکیل ہیں جنھیں 2007 میں قتل، مجرمانہ سازش، فسادات، اسلحہ رکھنے اور یو اے پی اے کی دفعات کے تحت گرفتار کیا گیا تھا۔ 2011 تک، وہ متعدد مقدمات میں بری ہو گیا تھا، اور ضمانت پر رہا ہوا تھا۔ لیکن اسے جیل کے پھاٹک پر دوبارہ گرفتار کیا گیا، اور اسے نئے مقدمات میں ڈھالا گیا۔ آخر کار اسے 2014 میں تمام الزامات سے بری کردیا گیا تھا اور انہوں نے ایک یادداشت لکھی تھی جس میں انہوں نے جیل میں اپنے سالوں، مبینہ تشدد، اور شہریوں کے حقوق کے کارکنوں کو نشانہ بنانے کے لئے دہشت گردی سے متعلق جرائم کے استعمال کے بارے میں ایک تحریر لکھی تھی۔”

ہیومن رائٹس واچ نے کہا، ہندوستانی حکام نے 14 اپریل 2020 کو دو حقوق کارکنوں کو حراست میں لیا جو حکومتی پالیسیوں کے نقاد ہیں۔ حکومت کو 2017 میں ریاست مہاراشٹر میں ایک مظاہرے کے دوران دیگر کارکنوں کے ساتھ ذات پات پر مبنی تشدد کو مبینہ طور پر اکسانے کے الزام میں آنند تلٹومبڈے اور گوتم نولکھا کے خلاف انسداد دہشت گردی کے قانون کے تحت تمام الزامات فوری طور پر خارج کردیں۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی کے طالب علم میراں حیدر کو یکم اپریل کو فروری میں دہلی میں بڑے پیمانے پر فرقہ وارانہ تشدد کو بھڑکانے کی سازش کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔ وہ راشٹریہ جنتا دل یوتھ ونگ کی دہلی یونٹ کے صدر بھی تھے۔ وہ جامعہ کوآرڈینیشن کمیٹی، جس میں جامعہ کے طلباء اور سابق طلباء پر مشتمل ایک گروپ، جس میں شہریت ترمیمی ایکٹ کی منظوری کے بعد بنایا گیا تھا، میں آواز بلند تھی۔ جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے طالب علم کارکن عمر خالد، جو دہلی فسادات کے معاملے کے ایک اہم ملزم ہیں، کو 13 ستمبر کو گرفتار کیا گیا تھا۔ ایف آئی آر 59 نے انھیں دہلی فسادات کا اصل سازشی نامزد کیا تھا اور اس پر فسادات اور مجرمانہ سازش کے دیگر الزامات کے ساتھ ان پر یو اے پی اے کے ساتھ الزام عائد کیا تھا۔ ستمبر کو، دہلی کی ایک عدالت نے خالد کی جانب سے پولیس تحویل کے دوران اس کے اہل خانہ سے ملنے کی اجازت کے لئے درخواست خارج کردی تھی۔ ان کے خلاف یکم اکتوبر کو کرائم برانچ میں دوسری ایف آئی آر بھی درج کی گئی تھی۔ فروری میں جعفر آباد کے علاقے میں سی اے اے کے خلاف احتجاج کے سلسلے میں دہلی پولیس نے 23 مئی کو دہلی پولیس کے ذریعہ جے این یو، میں خواتین کی طلباء کی اجتماعی پنجرا ٹوڈ اور ریسرچ اسکالرز کے بانی ممبروں کو گرفتار کیا تھا۔ ایک دن بعد دہلی کی ایک عدالت نے انہیں اس معاملے میں ضمانت دے دی۔ عدالت کے حکم کے فورا. بعد، دہلی پولیس نے ان دونوں کارکنوں سے تفتیش کے لئے درخواست منتقل کی اور انہیں تشدد سے متعلق ایک علیحدہ مقدمے میں گرفتار کرلیا۔ جے این یو کے ایک ریسرچ اسکالر شرجیل امام کو 28 جنوری کو سی اے اے کے مظاہروں کے دوران کی جانے والی اشتعال انگیز تقاریر کے الزام میں ان کے آبائی شہر، بہار کے جہان آباد سے گرفتار کیا گیا تھا۔ شرجیل امام کے خلاف مبینہ طور پر ‘ملک دشمن’ تبصرے کرنے کی ایک ویڈیو بڑے پیمانے پر آن لائن گردش کرنے کے بعد متعدد پولیس مقدمات درج کیے گئے تھے۔ ان کے خلاف دہکا میں چکھا جام کرنے کی مبینہ کال کے الزام میں بغاوت کا مقدمہ درج کیا گیا۔ وہ آسام، منی پور، اروناچل پردیش اور اتر پردیش میں بھی مطلوب ہے۔ آئی پی سی کے متعدد حصوں کے تحت الزامات کے باوجود، یو اے پی اے کو بھی ان کے خلاف استدعا کی گئی تھی۔ ماہانہ میگزین کشمیر بیانیہ کے ایک صحافی عاصف سلطان، جس نے مشہور عسکریت پسند کمانڈر برہان وانی پر ایک مضمون لکھا تھا، جس کی ہلاکت سے جولائی 2016 میں کشمیر میں حکومت مخالف مظاہروں کی لہر دوڑ گئی تھی کو 31 اگست، 2018 کو گرفتار کیا گیا تھا۔اسی طرح عشرت جہاں، گوتم نولکھا، آنند تلٹمبڈے، ایلگر پریشد،عام آدمی پارٹی کے سابق کونسلر طاہر حسین، گلفیش فاطمہ اور کئی سینکڑوں افراد شامل ہیں جن کو صرف اس بات پر کہ وہ بولے کیوں انہوں نے سوچا کیوں انہوں نے کہا کیوں کی بنیاد پر گرفتار کیا گیا ان کے کیرئیر خراب کئے گئے حالانکہ ان میں سے کوئی بھی شخص مسلح نہیں تھا بلکہ ہر کسی کا تعلق تعلیم سے تھا بولنے پڑھنے کہنے سیکھانے سے تھا۔

آزادی اظہار پر ریاستی پابندی ہندوستان اور پاکستان کو وہ مشترکہ مسئلہ ہے کو کہ 70 سالوں سے برقرار ہے اور دونوں ممالک میں جس قسم کے سربراہ مسلط ہیں یہ مسئلہ مستقبل قریب میں جلد حل ہوتا نظر بھی نہیں آتا ہے۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *