Type to search

خبریں سیاست

فردوس عاشق اعوان کو وزیر اعظم نے مستعفی ہونے سے روک دیا

وزیراعلیٰ پنجاب کی معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان جنہوں  نے عہدے سے مستعفی ہونے پر غور شروع کردیا تھا انہیں وزیر اعظم نے مستعفی ہونے سے روک دیا ہے۔ ذرائع کے مطابق فردوس عاشق اعوان وزیراعلیٰ پنجاب کی معاون خصوصی برائے اطلاعات کے عہدے سے مستعفی ہونے پر غور کررہی ہیں اور اس سلسلے میں انہوں نے وزیراعظم عمران خان سے بھی گفتگو کی ہے۔
ذرائع کا کہناہے کہ فردوس عاشق اعوان وزیراعظم کے جواب انتظار کررہی ہیں جس پرفردوس عاشق اعوان کے استعفے سے متعلق کوئی حتمی فیصلہ کریں گی۔
۔تاہم اب ذرائع سے حاصل ہونے والی میڈیا رپورٹس کے مطابق فردوس عاشق اعوان کو وزیر اعظم نے مستعفی ہونے سے روک دیا ہے۔
فردوس عاشق اعوان کا کرئیر کیا رہا؟
انہوں نے اپنا پہلا الیکشن سابق اسپیکر قومی اسمبلی امیر حسین کے مقابلے میں جیتا تھا۔ پہلے پاکستان مسلم لیگ (ق) میں تھیں اور پھر پاکستان پیپلز پارٹی میں اور اب پاکستان تحریک انصاف میں شامل ہیں۔ فردوس عاشق اعوان نے اپنے سیاسی کیریئر کا آغاز 1990 میں کیا جب انہوں نے سوسائٹی برائے ہیلتھ اینڈ ڈویلپمنٹ اینڈ ایکسچینج کی بنیاد رکھی اور صحت کی دیکھ بھال کے نظام کو بہتر بنانے کی وکالت کی۔ 2002 میں وہ مسلم لیگ (ق) کے ٹکٹ پر خواتین کی مخصوص نشست پر قومی اسمبلی کے لیے منتخب ہوگئیں۔ 2008 میں ، وہ ایک بار پھر پاکستان پیپلز پارٹی میں شامل ہونے کے بعد ، این اے 111 سیالکوٹ II سے قومی اسمبلی کے لیے منتخب ہوئیں۔ انہوں نے مسلم لیگ (ق) سے اپنے مخالف چودھری امیر حسین کے خلاف 45،704 ووٹ حاصل کیے۔ منتخب ہونے کے بعد وہ پیپلز پارٹی کی کابینہ میں آبادی کی بہبود کی وزیر کے عہدے پر فائز ہوگئیں۔فردوس اعوان کو بعد میں پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں وزارت اطلاعات کا قلمدان دیا گیا۔ انہوں نے 25 دسمبر 2011 کو وفاقی کابینہ کے خصوصی اجلاس کے دوران وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کو اپنا استعفیٰ پیش کیا۔ بعد ازاں وزیر اعظم نے اعوان کے ساتھ ون ٹو ون ملاقات کرنے کے بعد اس کو مسترد کر دیا۔18 اپریل ، 2012 کو ، قمر زمان کائرہ کو نیا وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مقرر کیا گیا ، جبکہ سابق وزیر اطلاعات فردوس عاشق اعوان کو وزارت برائے قومی ضابطوں اور خدمات کا منصب دوبارہ سونپا گیا۔ انھوں نے 2015 میں پی پی پی کے نائب صدر سے استعفیٰ دے دیا۔ 30 مئی ، 2017 کو ، انہوں نے نتھیا گلی میں پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی ۔ 2018 کے پاکستانی عام انتخابات میں وہ این اے 72 (سیالکوٹ اول) میں پاکستان تحریک انصاف کے ٹکٹ پر اپنی نشست سے مسلم لیگ (ن) کے ارمغان سبحانی کے خلاف 91،393 ووٹ حاصل کرکے ہار گئیں جنھوں نے 129،041 ووٹ حاصل کیے۔ کابینہ میں ردوبدل کے بعد وہ 18 اپریل 2019 کو وزیر اطلاعات اور نشریات کے لیے وزیر اعظم عمران خان کی معاون خصوصی کے عہدے پر فائز تھیں۔ 27 اپریل 2020 تک دفتر میں رہیں۔ 2 نومبر 2020 کو وہ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی معاون خصوصی برائے معاون خصوصی کے طور پر مقرر ہوگئیں۔

Tags:

You Might also Like

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *