Type to search

سیاست عوام کی آواز

زبان خلق کو نقارۂ خدا سمجھو

الیکشن 2018 جو مختلف وجوہات کی بنا پر اہم ہے وہیں اس کی اہمیت اس لئے اور بھی زیادہ ہے کہ اب عوام میں وہ شعور بیدار ہو چکا ہے جس کی شاید ایک عمر سے اس قوم کو ضرورت تھی۔ ابھی یہ شعور اپنے ابتدائی مراحل میں ضرور ہے لیکن 2018 کے انتخابات میں یہ بڑا بدلاؤ لا سکتا ہے۔ کیونکہ ماضی کے انتخابات کی نسبت اب عوام اپنے لیڈروں سے سوالات کرنے کا حوصلہ رکھتی ہے۔

فیض احمد فیض کی نظم ‘ہم دیکھیں گے’ اس صورتحال میں صادق آتی ہے۔

کراچی کے باسیوں کےلئے یہ سوچنا تودرکنار کہ انہیں کبھی ایم کیوایم کے شکنجے سے چھٹکارا ملے گا یہ بھی سوچنا محال تھا کہ وہ کبھی اسی جماعت کے سامنے اپنے حقوق کے لئے کھڑے ہوں۔ لیکن اب شہریوں کے منہ میں زبان آگئی ہے۔ وہ ہمت رکھتے ہیں اپنے لیڈروں سے ان کی کارکردگی جاننے کی۔

ایم کیوایم کے خالد مقبول صدیقی جب ضلع وسطی میں پارٹی آفس کا افتتاح کرنے پہنچے توعوام نے پلے کارڈ اٹھا کر انہیں آئینہ دکھا دیا۔

یہی نہیں بلکہ ایم کیوایم کے قائد الطاف حسین کے بعد کچھ وقفے کے لئے ایم کیوایم کی چئیرمین شپ کا تاج پہننے والے فاروق ستار بھی جب بولٹن مارکیٹ کی میمن مسجد پہنچے تو انہیں لگا کہ وہ یہاں اپنا میمن کارڈ آرام سے کھیل پائیں گے لیکن شہریوں نے ان کا استقبال بددعاؤں سے کیا۔

عوام کے عتاب کا شکار بننے والی صرف ایم کیوایم ہی نہیں بلکہ یہاں تو پیپلز پارٹی بھی نہیں بچی۔ لیاری کے علاقے کا احتجاج پہلے ہی پیپلزپارٹی کے لیڈروں کا ہوش اڑانے کے لئے کم تھا کہ سابق اپوزیشن لیڈرخورشید شاہ جو اپنے حلقےمیں بڑے بڑوں کو اپنے سامنے جھکنے پر مجبور کر دیا کرتے تھے کوان کے جیالوں نے گھیرلیا؟ ایسی صورتحال میں انہوں نے وہاں سے نکلنے میں ہی عافیت جانی۔

نوجوانوں کی آواز گردانی جانے والی جماعت پاکستان تحریک انصاف بھی عوام کے سوالوں سے نہیں بچی۔ خرم شیر زمان جب اپنے حلقے میں انتخابی مہم چلانے پہنچے تو عوام نے ان سے ان کے کام کا حساب مانگ لیا۔

تحریک انصاف کے قائد عمران خان جب کراچی میں انتخابی مہم کے لئے پہنچے تو دہلی کالونی پرسڑک کی بندش پرعوام نے سڑکوں پر ہی عمران خان کے خلاف نعرے لگا دیے۔

حلقہ 250 سے 2013 کے انتخابات میں ایم کیوایم کی امیدوار خوش بخت شجاعت کو مات دینے والے عارف علوی بھی عوام کے سوالوں سے بچ نہیں سکے۔حلقے میں ووٹ مانگنے کیا گئے عوام کارکردگی کا حساب مانگ لیا۔

https://www.youtube.com/watch?v=3A6ImsTwC6A

ایون فیلڈ اپارٹمنٹ کا فیصلہ کیا آیا، لندن میں مقیم نواز شریف اور ان کے خاندان کو پاکستانیوں نے بتادیا کہ اب عوام کا پیسہ کھا کر کوئی بھی سیاست دان بچ نہیں پائے گا۔

وہ کہتے ہیں نا زبان خلق کو نقارہ خدا سمجھو، تو لگتا کچھ یوں ہے کہ انتخابات سے پہلے ہی عوام نے بتا دیا ہے کہ اب کام نہ کرنے والے کی چلنے نہیں دیں گے۔

Tags:

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *