دارالامان لاہور کی سابق سپرنٹنڈنٹ نے لاہور ہائیکورٹ سے رجوع کر لیا

لاہور میں یتیم اور بے سہارا بچیوں کی پناہ گاہ کاشانہ ویلفیئر ہوم کی سابق سپرنٹنڈنٹ افشاں لطیف نے لاہور ہائیکورٹ سے رجوع کر لیا۔

افشاں لطیف نے لاہور ہائیکورٹ میں اپنی درخواست میں معاملے کی تحقیقات کے لیے جوڈیشل کمیشن بنانے کی استدعا کی۔ افشاں لطیف کی درخواست پر عدالت نے ڈی سی اور ڈائریکٹر بیت المال کو 12 دسمبر کو طلب کر لیا۔

اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے افشاں لطیف کا کہنا تھا کہ انصاف کے لیے انہوں نے ہر دروازہ کھٹکھٹا لیا لیکن جب کوئی شنوائی نہ ہوئی تو سوشل میڈیا کا رخ کیا۔

لاہور: دارالامان میں سرکاری وزرا کے مطالبات پورا کرنے کے لئے یتیم لڑکیوں کے ‘غلط استعمال’ کا انکشاف

انہوں نے کہا کہ یہ ان کا نہیں دارالامان کی بچیوں کے مستقبل کا سوال ہے، انہوں نے سارا معاملہ سامنے رکھ دیا ہے امید ہے عدالت سے انصاف ملے گا۔

کاشانہ لاہور کی انچارج عہدہ سے فارغ، سرکاری گھر خالی کرنیکا حکم

یاد رہے افشاں لطیف کی ویڈیو چند روز قبل منظر عام پر آئی تھی جس میں دارالامان کاشانہ میں مقیم بچیوں کو مبینہ ہراساں کرنے کا الزام لگایا گیا تھا۔

دارالامان بھی جائے امان نہیں

اس معاملے پر اپنا مؤقف بیان کرتے ہوئے سابق صوبائی وزیر سماجی بہبود اجمل چیمہ نے افشاں لطیف کے الزامات کو بے بنیاد قرار دیا۔ انہوں نے کاشانہ اطفال لاہور کے معاملے کی مکمل تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ معاملے پر عدالت کا دروازہ کھٹکھٹائیں گے۔