راولپنڈی رنگ روڈ سکینڈل: زلفی بخاری نے معاونِ خصوصی کے عہدے سے استعفا دے دیا

وزیراعظم کے معاون خصوصی زلفی بخاری نے راولپنڈی رنگ روڈ سکینڈل میں اپنا نام آنے پر عہدے سے استعفی دے دیا۔

زلفی بخاری نے اپنے استعفے کا اعلان  اپنے آفیشل ٹوئٹر اکاؤنٹ سے کیا۔ ٹوئٹر پر تھرڈ لکھتے ہوئے زلفی بخاری نے کہا کہ میرے وزیراعظم نے کہا تھا کہ جب کسی شخص کا سچے یا جھوٹے کسی سکینڈل میں نام آجائے تو اسے کسی بڑے عہدے پر نہیں رہنا چاہیئے جب تک کہ اس کا نام کلئیر نہ ہو جائے۔ راولپنڈی رنگ روڈ منصوبے میں میرا نام آنے پر میں یہ مثال بنانا چاہتا ہوں۔

زلفی بخاری نے لکھا کہ میں تب تک اپنے عہدے سے استعفی دیتا ہوں جب کہ میں اپنے خلاف لگائے گئے تمام جھوٹے اور بوگس الزامات سے بری الذمہ نہ ہو جاؤں۔ انہوں نے مزید لکھا کہ رنگ روڈ منصوبے اور رئیل اسٹیٹ سے میرا کوئی تعلق نہ ہے۔ اس مد میں ایک غیر جانبدارانہ اور جوڈیشل انکوائری کی جائے۔

انہوں نے کہا کہ میں پاکستان میں رہوں گا اور وزیراعظم کے مشن میں ان کے ساتھ کھڑا رہوں گا۔ میں نے بیرون ملک سے آکر اپنے لوگوں کی خدمت کرنے کے لئے قربانی دی اور میں کسی بھی قسم کی انکوائری کا سامنا کرنے کے لئے تیار ہوں۔

یاد رہے کہ راولپنڈی رنگ روڈ منصوبے میں بعض نجی ہاؤسنگ سوسائٹیز کے حق میں دوبارہ حد بندی اور منصوبے کی لاگت میں 25 ارب روپے اضافے کا انکشاف ہوا تھا، جس کے  بعد وزیراعظم عمران خان نے وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار کو منصوبے کی تحقیقات کی ہدایت جاری کی تھیں۔

ذرائع نے بتایا تھا کہ بااثر سیاستدانوں اورمفاد پرست گروپس کے کہنے پر نجی ہاؤسنگ سوسائٹیز کو فائدہ دینےکے لیے حدبندی تبدیل کردی گئی ، 85 کلومیٹر طویل راولپنڈی رنگ روڈ کی تعمیر پر ابتدائی تخمینہ تقریباً 40 ارب روپے تھا، تاہم وزیراعظم کو منصوبے کے تخمینے میں 25 ارب روپے کا اضافے کی  اطلاعات ملیں،اسی میں وزیراعظم کے معاون خصوصی زلفی بخاری کا نام بھی شامل تھا۔